உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    دھونی سے رشتوں پر ہربھجن نے کیوں کہا-میری ان سے شادی تو نہیں ہوئی۔۔۔EXCLUSIVE انٹرویو میں دئیے بے باک جواب

    ہربھجن سنگھ نے حال ہی میں بین الاقوامی کرکٹ کو الوداع کہا ہے۔

    ہربھجن سنگھ نے حال ہی میں بین الاقوامی کرکٹ کو الوداع کہا ہے۔

    ٹیم کا اتحاد ٹوٹ گیا۔ نئے لڑکوں کو لانا… جب پرانے اوزار تیز تھے تو نئے کی ضرورت نہیں تھی۔ ہم پھونکے تو نہیں تھے۔ ابھی 38 سال بھی نہیں ہوئے تھے۔ ان کی عمر صرف 32 سال تھی اور اگر وہ آج بھی کھیلیں گے تو اپنا دم لگادیں گے۔ یہ الگ بات ہے کہ وہ اب نہیں کھیلے گا!

    • Share this:
      نئی دہلی:Harbhajan Singh EXCLUSIVE Interview:سابق آف اسپنر ہربھجن سنگھ کو بین الاقوامی کرکٹ کو الوداع کہے تقریباً ایک ماہ ہونے والا ہے جس کے بعد سے ان کے بارے میں کئی چرچے ہو رہے ہیں۔ بعض اوقات ایسے اشارے ملتے ہیں کہ وہ کرکٹ کے بعد سیاست کے میدان میں بھی اتر سکتے ہیں۔ بعض اوقات وہ بطور کوچ اپنا کیریئر بڑھانے کے اشارے دیتے ہیں۔ انیل کمبلے اور روی چندرن اشون کے بعد ہندوستان کے لیے سب سے زیادہ ٹیسٹ وکٹیں لینے والے اس گیند باز سے ہم نے خصوصی بات چیت کی۔ اس خصوصی انٹرویو کے چند اہم سوالات اور جوابات یہ ہیں۔

      سوال: خبریں ہیں کہ آپ ایک نئی اننگ کی شروعات نئے میدان پر کرتے نظر آئیں گے! اس میں کتنی سچائی ہے؟
      نئی اننگز کا آغاز ضرور ہوگا کیونکہ کرکٹ کا پہلو اب پیچھے رہ گیا ہے۔ کرکٹ کے پہلو کا مطلب یہ ہے کہ بطور کھلاڑی کھیلی گئی اننگز ختم ہو چکی ہے۔ لیکن، میں اب بھی اس کھیل سے وابستہ ہوں۔ اب دوسرا پہلو کرکٹ سے جڑے رہنا ہے اور اس کا واحد راستہ کوچنگ ہے۔ اور جو آپ سننا چاہتے ہیں (ہنستے ہوئے) یعنی سیاست کے بارے میں۔ میں آپ کو بتاتا چلوں کہ میں نے اس حوالے سے کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے۔ کیا منصوبہ ہے. کیوں کرنا ہے فیصلہ نہیں کیا لیکن جب فیصلہ کروں گا تو ضرور بتاؤں گا۔

      سوال:آپ نے کوچنگ کے بارے میں بات کی۔ کیا آپ کے لئے دو مہینے کا آئی پی ایل پلیٹ فارم ہوگا یا پھر انٹرنیشنل ٹیم؟ آپ فل ٹائم کوچنگ کریں گے یا پھر مینٹرشپ جیسا رول لیں گے؟
      دیکھئے، میں ابھی ریٹائر ہوا ہوں۔ میں کافی عرصے سے گھر سے باہر ہوں۔ کرکٹر کی زندگی سپاہی جیسی ہوتی ہے۔ اس کا سامان ہمیشہ بندھا رہتا ہے۔ وہ جب بھی گھر آتا، ایک ہفتہ یا دس دن کے بعد جانا پڑتا۔ اب میں اپنا (زیادہ) وقت خاندان کو دینا چاہتا ہوں۔ میں پرانے لوگوں سے ملنا چاہتا ہوں۔ میں نے پچھلے 20-22 سالوں میں بہت سی چیزوں کو یاد کیا ہے۔ لیکن کرکٹ میری زندگی ہے اور ہمیشہ رہے گی۔ میں کرکٹ کے بغیر کچھ بھی نہیں ہوں۔ مجھے نہیں معلوم کہ میں کوچنگ سے کتنا وابستہ رہوں گا۔ لیکن اس وقت میں کسی بین الاقوامی ٹیم کے ساتھ اتنا وقت نہیں گزار سکوں گا۔ بین الاقوامی ٹیم کے ساتھ آپ کو دوبارہ 12 مہینے مصروف رہنا پڑتا ہے جبکہ آئی پی ایل میں 2-3 ماہ کسی بھی ٹیم کے لیے کام آسکتا ہوں۔

      سوال: آپ نے بطور کپتان ممبئی انڈینس کو چمپئنس لیگ جتایا۔ اس کے باوجود آپ کی کپتانی کی بات نہیں ہوتی ہے؟ آپ کو یہ عجیب لگتا ہے کہ آپ کی کپتانی کو لے کر بحث نہیں ہوتی ہے؟
      بہتر ہے آپ یہ نہ چھیڑیں کہ میں کپتان کیوں نہیں بنا… میں نے کھیلتے ہوئے ملک کی خدمت کی۔ اگر میں کپتان بن بھی جاتا تو کوئی بڑی بات نہ ہوتی اور اگر نہ بنتا تو کوئی افسوس نہیں ہے۔

      سوال: آپ کا سب سے بہترین مظاہرہ آسٹریلیا کے خلاف ہے۔ کیسا محسوس ہوتا ہے آپ کو جب رکی پونٹنگ نے کہا کہ آپ ان کے لئے سب سے مشکل چیلنج رہے؟
      رکی پونٹنگ بہت بڑے کھلاڑی ہیں اور جب آپ ان سے یا میتھیو ہیڈن جیسے کھلاڑیوں سے یہ باتیں سنتے ہیں تو اچھا لگتا ہے۔ اس طرح کوئی کسی کی تعریف نہیں کرتا۔ میدان میں ضرور نشان چھوڑا ہوگا۔ میدان میں خود کو آزمانے کے لیے آسٹریلوی ٹیم سے بہتر کوئی نہیں تھا کیونکہ وہ اس دور کے باس تھے۔ میں یہ سوچ کر اس کے خلاف آتا تھا اور اچھا کھیلتا تھا اور بتاتا تھا کہ میں بھی کرکٹ میں (کامیابی) برقرار رکھ سکتا ہوں۔

      سوال: دھونی کے ساتھ آپ کے رشتے کیسے ہیں؟
      بہت اچھا ہے۔ میری ان سے شادی تو نہیں ہوئی۔

      سوال: حال ہی میں کچھ ایسی ہیڈلائنس آئی تھی کہ آپ دھونی سے ناراض ہیں؟
      ہر انسان کا سوچنے کا انداز مختلف ہوتا ہے۔ میں صرف یہ کہہ رہا ہوں کہ 2012 کے بعد کچھ چیزیں بہتر ہو سکتی تھیں۔ ویرو (سہواگ)، گوتم (گمبھیر)، یووی (یوراج سنگھ) کا کیریئر آئی پی ایل کھیلتے ہوئے 35-36 سال تک چلا۔ وہ کھیلتے ہوئے ریٹائر ہو سکتے تھے۔ کیا میں 2011 کے بعد اچانک ٹوٹ گیا اور یہ تمام کھلاڑی کبھی ایک ساتھ نہیں کھیلے؟ میری عمر صرف 31 سال تھی۔ یووی چھوٹا ہے۔ گوتم اس سے بھی چھوٹا ہے۔ یہ سب 2015 کے لیے دستیاب تھے لیکن ان میں سے کوئی نہیں آیا۔ یہ ایک بڑا سوال ہے۔ اس وقت بی سی سی آئی میں کون لوگ تھے؟ وہ اس بات کا جواز (ثابت) کیسے کریں گے؟ ایسا رویہ کیوں اختیار کیا گیا؟ ہم مستقبل میں منتخب کیوں نہیں ہوئے؟ ایسا نہیں تھا کہ ہم 2011 میں کوارٹر فائنل میں ہار گئے تھے۔ ہم نے ورلڈ کپ جیتا تھا۔ یہ چیز ہضم نہیں ہوتی یہ سمجھ سے بالاتر ہے۔

      سوال: اس کا مطلب تو یہی ہوا کہ آپ کو دھونی سے شکایت ہے؟
      ہرگز نہیں. دھونی (MS Dhoni) سے کوئی شکایت نہیں ہے۔ وہ ایک اچھا دوست بھی رہا ہے۔ بہت اچھا کپتان رہا ہے۔ میری شکایت بی سی سی آئی سے ہے۔ جس کی حکومت تھی۔ میں بی سی سی آئی کو حکومت کہتا ہوں۔ ان دنوں جو حکومت تھی، جو ان دنوں سلیکٹر تھے، انہوں نے ٹھیک سے کام نہیں کیا۔ ٹیم کا اتحاد ٹوٹ گیا۔ نئے لڑکوں کو لانا… جب پرانے اوزار تیز تھے تو نئے کی ضرورت نہیں تھی۔ ہم پھونکے تو نہیں تھے۔ ابھی 38 سال بھی نہیں ہوئے تھے۔ ان کی عمر صرف 32 سال تھی اور اگر وہ آج بھی کھیلیں گے تو اپنا دم لگادیں گے۔ یہ الگ بات ہے کہ وہ اب نہیں کھیلے گا! جب ہم نے سلیکٹرز سے یہ پوچھا تو انہوں نے کہا کہ یہ ہمارے بس کی بات نہیں تو پھر آپ سلیکٹر کیوں تھے بھائی؟
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: