ہوم » نیوز » اسپورٹس

IND VS AUS: جسپریت بمراہ اور محمد سراج پر نسلی تبصرہ، سڈنی میں دی گئی بھدی گالیاں

Racial Abuse Case: سڈنی ٹسٹ کے تیسرے دن جسپریت بمراہ اور محمد سراج پر آسٹریلیائی مداحوں نے نسلی تبصرہ کیا، جس کے بعد ہندوستانی ٹیم منیجمنٹ نے سرکاری شکایت درج کرائی ہے۔

  • Share this:
IND VS AUS: جسپریت بمراہ اور محمد سراج پر نسلی تبصرہ، سڈنی میں دی گئی بھدی گالیاں
جسپریت بمراہ اور محمد سراج پر نسلی تبصرہ، سڈنی میں دی گئی بھدی گالیاں

نئی دہلی: سڈنی ٹسٹ کے تیسرے دن ایک بڑا تنازعہ سامنے آیا ہے۔ ٹیم انڈیا کے تیز گیند باز جسپریت بمراہ (Jasprit Burmah) اور محمد سراج (Mohammed Siraj) کے خلاف سڈنی میں نسلی تبصرہ ہوا ہے۔ ٹیم انڈیا نے اس کی سرکاری شکایت میچ ریفری ڈیوڈ بون کے پاس درج کرائی ہے۔ تیسرے دن کا کھیل ختم ہونے کے بعد ٹیم انڈیا کے کپتان اجنکیا رہانے، جسپریت بمراہ، محمد سراج کرکٹ آسٹریلیا کے افسران اور میچ ریفری سے بات کرتے ہوئے دیکھے گئے۔ اس کے بعد ٹیم انڈیا منیجمنٹ نے سرکاری شکایت درج کرائی۔ ہندوستانی کھلاڑیوں پر نسلی تبصرہ کے معاملے کے بعد اب سوشل میڈیا پر آسٹریلیائی مداحوں کو جم کر کوسا جا رہا ہے۔ کئی مداحوں نے تو آسٹریلیا دورہ درمیان میں ہی منسوخ کرنے کا مطالبہ کردیا ہے۔


ایک مداح نے لکھا کہ ہندوستان کو فوراً آسٹریلیا دورہ منسوخ کرکے وطن واپس لوٹنا چاہئے اور آسٹریلیائی کھلاڑیوں پر بھی آئی پی ایل سے پابندی عائر کرنی چاہئے۔ وہیں کئی اور مداحوں نے آسٹریلیائی لوگوں کو نسلی حملہ کرنے والا بتایا۔ ایک مداح نے لکھا کہ آسٹریلیائی لوگ نسلی تبصرہ کرنے کے لئے ہی جانے جاتے ہیں۔


جانئے کب ہوا بمراہ اور محمد سراج پر نسلی تبصرہ


آسٹریلیائی اخبار ڈیلی ٹیلی گراف کا دعویٰ ہے کہ محمد سراج اور جسپریت بمراہ کو گزشتہ دو دنوں سے کرکٹ ناظرین گالیاں دے رہے تھے، جب کھلاڑی رینڈوک اینڈ پر کھڑے تھے، تو وہاں بیٹھے ایک مداح نے محمد سراج کو گالیاں دیں، جو کہ فائن لیگ باونڈری پر فیلڈنگ کر رہے تھے۔ جسپریت بمراہ کے ساتھ بھی ایسا سلوک ہوا اور تیسرے دن کا کھیل ختم ہوتے ہوتے یہ معاملہ بہت زیادہ بڑھ گیا۔

واضح رہے کہ آسٹریلیا دورے پر یہ تیسرا تنازعہ سامنے آیا ہے۔ اس سے پہلے میلبورن میں روہت شرما سمیت پانچ ہندوستانی کھلاڑیوں پر بایو ببل توڑنے کا الزام لگا تھا۔ اس کے بعد برسبین کے سخت کوارنٹائن ضوابط کو لے کر بھی ٹیم انڈیا اور کرکٹ آسٹریلیا کے درمیان اتفاق رائے نہیں بن پایا ہے۔ اب نسلی تبصرہ کا معاملہ سامنے آگیا ہے۔ اس دورے پر بہت جلد کوئی بڑی خبر سامنے آسکتی ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Jan 09, 2021 05:43 PM IST