உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ASIA CUP 2022: ’سپرسنڈے‘ پر کس کا ہوگا قبضہ؟ وراٹ کوہلی یا بابر اعظم! کون بنے گا ایشیا کا سب سے بڑا بلے باز؟

    وراٹ کوہلی یا بابر اعظم، کون بنے گا ایشیا کا سب سے بڑا بلے باز؟ سپر سنڈے کو ہوگا اس کا فیصلہ۔

    وراٹ کوہلی یا بابر اعظم، کون بنے گا ایشیا کا سب سے بڑا بلے باز؟ سپر سنڈے کو ہوگا اس کا فیصلہ۔

    Asia Cup-2022: ہندوستان اور پاکستان کی ٹیمیں اب 28 اگست کو ایشیا کپ کے مقابلے میں آمنے سامنے ہوں گی۔ وراٹ کوہلی کے ٹی20 انٹرنیشنل کیریئر کا یہ 100واں میچ ہوگا، جسے وہ یادگار بنانے کی کوشش کریں گے۔ بابر اعظم ایک بار پھر سے 2021 عالمی کپ کی کارکردگی کو دہرانا چاہیں گے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi, India
    • Share this:
      نئی دہلی: ہندوستان اور سخت حریف پاکستان کے درمیان ہونے والے کرکٹ میچ ہمیشہ سے دلچسپ رہے ہیں۔ ایک بار پھر سے دونوں ملک 28 اگست کو دبئی کے میدان پر ایشیا کپ 2022 (Asia Cup-2022) کے گروپ میچ میں مد مقابل ہونے والے ہیں۔ پوری دنیا کی نگاہیں اس میچ پر ہوں گی۔ دونوں ٹیمیں سپر-4 میں ایک بار پھر سے مد مقابل ہوسکتی ہیں۔ دونوں ٹیموں کے پاس ایک سے بڑھ کر میچ فاتح ہیں۔

      ہندوستان کے سابق کپتان وراٹ کوہلی کا شمار قابل اعتماد کھلاڑیوں میں ہوتا ہے۔ وہیں، پاکستان کی کمان سنبھال رہے بابر اعظم بھی کسی معاملے میں پیچھے نہیں ہے۔ دونوں کھلاڑیوں کا موازنہ کرنا بے معنی ہوگا، باوجود اس کے کچھ اعدادوشمار کی بنیاد پر وراٹ کوہلی اور بابر اعظم کی کارکردگی کو دیکھ سکتے ہیں۔

       ہندوستان کے سابق کپتان وراٹ کوہلی کا شمار قابل اعتماد کھلاڑیوں میں ہوتا ہے۔

      ہندوستان کے سابق کپتان وراٹ کوہلی کا شمار قابل اعتماد کھلاڑیوں میں ہوتا ہے۔


      وراٹ کوہلی اور بابر اعظم کی 2022 میں ٹی20 میں کارکردگی
      کل چار میچ کھیلے ہیں۔ 20.25 کی اوسط سے 81 رن بنائے ہیں۔ ان کا بہترین اسکور 52 رن ہے۔ وہیں پاکستانی کپتان بابر اعظم نے ایک میچ کھیلے ہیں اور 66.00 کی اوسط سے 66 رن بنائے ہیں۔ ان کا بہترین اسکور بھی 66 رن ہے۔

      کوہلی اور بابر اعظم کی ٹی20 میں کارکردگی

      وراٹ کوہلی نے پاکستان کے خلاف 7 میچ کھیلے ہیں۔ 77.75 کی اوسط سے 311 رن بنائے ہیں۔ انہوں نے تین نصف سنچری لگائی ہیں۔ وراٹ کوہلی کے بلے سے ایک بھی سنچری نہیں نکلی ہے۔ بابر اعظم نے ہندوستان کے خلاف ایک ٹی20 میچ کھیلا ہے۔ جس میں انہوں نے 68 کی اوسط سے ناٹ آوٹ 68 رن بنائے ہیں۔ انہوں نے ایک نصف سنچری لگائی ہے۔

      کوہلی اور بابر اعظم کی ٹی20 انٹرنیشنل میں اوور آل کارکردگی

      ہندوستان کے سابق کپتان وراٹ کوہلی نے 99 میچ کھیلے ہیں۔ انہوں نے 50.12 کی اوسط سے 3308 رن بنائے ہیں۔ کوہلی کا اسٹرائیک ریٹ 137.66 رن ہے۔ ان کا بہترین اسکور ناٹ آوٹ 94 رن ہے۔ انہوں نے اس دوران ایک بھی سنچری نہیں لگائی ہے جبکہ 30 نصف سنچری ان کے نام درج ہے۔

      بابر اعظم کی بات کریں تو اسپن کے خلاف قدموں کا اچھا استعمال کرتے ہیں۔ سوئپ شاٹ ان کا اہم ہتھیار ہے۔
      بابر اعظم کی بات کریں تو اسپن کے خلاف قدموں کا اچھا استعمال کرتے ہیں۔ سوئپ شاٹ ان کا اہم ہتھیار ہے۔


      بابر اعظم کی ٹی20 انٹرنیشنل میں اوور آل کارکردگی

      پاکستانی کپتان بابر اعظم نے ٹی20 میں کل 74 میچ کھیلے ہیں۔ انہوں نے 45.52 کی اوسط سے 2686 رن بنائے ہیں۔ ان کا اسٹرائیک ریٹ 129.44 ہے۔ انہوں نے ایک سنچری اور 26 نصف سنچریاں لگائی ہیں۔ ان کا بہترین اسکور 122 رن ہے۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      ICC ODI Rankings: ٹیم انڈیا کو ملا بڑا فائدہ، پاکستان کی ٹیم بھی زیادہ پیچھے نہیں

      یہ بھی پڑھیں۔

      ہندوستان-پاکستان نے کی ایک جیسی غلطی، کہیں ایشیا کپ اور ٹی20 عالمی کپ میں اٹھانا نہ پڑ جائے بڑا نقصان! 

      یہ تو ہوئے اعدادوشمار، اب بات کرتے ہیں وراٹ کوہلی اور بابر اعظم کے مضبوط پوزیشن کی۔ وراٹ کوہلی اسٹرائیک روٹیٹ کرنے میں ماہر ہیں۔ وہ ہوا میں شاٹ کھیلنے کے بجائے گراونڈیڈ شاٹ زیادہ کھیلتے ہیں۔ اپنے اوپر دباو بننے نہیں دیتے۔ ہُک اور پُل شاٹ بڑی آسانی سے کھیلتے ہیں۔ وہیں بابر اعظم کی بات کریں تو اسپن کے خلاف قدموں کا اچھا استعمال کرتے ہیں۔ سوئپ شاٹ ان کا اہم ہتھیار ہے۔ کور ڈرائیو پسندیدہ اسٹروک ہے۔ وراٹ کوہلی کی ہی طرح ہوا میں شاٹ کھیلنے کے بجائے گراونڈیڈ شاٹ زیادہ کھیلتے ہیں۔

      اگر یہ دونوں کھلاڑی پچ پر ٹک جائیں تو اکیلے دم پر ہی میچ کا پاسا پلٹ سکتے ہیں، لیکن حالیہ فارم کی بنیاد پر دیکھا جائے تو بابر اعظم کا پلڑا وراٹ کوہلی کے مقابلے زیادہ بھاری ہے۔ وراٹ کوہلی کے ٹی20 کیریئر کا یہ 100واں میچ ہوگا، جسے وہ یادگار بنانے کی کوشش کریں گے۔ بابر اعظم ایک بار پھر سے سال 2021 عالمی کپ کی کارکردگی کو دہرانا چاہیں گے۔ اب یہ تو وقت ہی بتائے گا کہ 28 اگست یعنی ‘سپر سنڈے‘ والے دن کس کا بلہ رنوں کی بارش کرتا ہے اور کون اپنی ٹیم کی نیا پار لگاتا ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: