உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    وراٹ کوہلی اور بی سی سی آئی کے درمیان جنگ 6 ماہ پہلے ہی ہو گئی تھی شروع! نتیجہ اب دیکھنے کو ملا

    وراٹ کوہلی نے اپنے ٹویٹ میں لکھا : اس فیصلہ تک میں کافی وقت لے کر پہنچا ہوں ، میں نے اپنے قریبی لوگوں سے کافی بات چیت کی ۔ روی شاستری ، روہت شرما جو ٹیم کے اہم اراکین ہیں ، ان سے بات چیت کے بعد ہی میں نے یہ فیصلہ کیا ہے ۔

    وراٹ کوہلی نے اپنے ٹویٹ میں لکھا : اس فیصلہ تک میں کافی وقت لے کر پہنچا ہوں ، میں نے اپنے قریبی لوگوں سے کافی بات چیت کی ۔ روی شاستری ، روہت شرما جو ٹیم کے اہم اراکین ہیں ، ان سے بات چیت کے بعد ہی میں نے یہ فیصلہ کیا ہے ۔

    وراٹ کوہلی نے اپنے ٹویٹ میں لکھا : اس فیصلہ تک میں کافی وقت لے کر پہنچا ہوں ، میں نے اپنے قریبی لوگوں سے کافی بات چیت کی ۔ روی شاستری ، روہت شرما جو ٹیم کے اہم اراکین ہیں ، ان سے بات چیت کے بعد ہی میں نے یہ فیصلہ کیا ہے ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      ratنئی دہلی. وراٹ کوہلی (Virat Kohli) کے ٹی-20 کپتانی چھوڑنے کی بات سے بہت سے لوگ چونک سکتے ہیں لیکن اس کی تیاری کئی مہینوں سے جاری تھی۔ ورک لوڈ مینیجمینٹ کے بارے میں بات کرتے ہوئے کوہلی نے ٹی 20 ورلڈ کپ کے بعد کپتانی چھوڑنے کی بات کہی لیکن ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ (ڈبلیو ٹی سی WTC) کے فائنل کے بعد سے ہی ان کی خراب بلے بازی کا مظاہرہ دیکھتے ہوئے ٹی 20 کپتانی چھوڑنے کی باتیں ہو رہی تھیں۔ ورلڈ کپ کے مقابلے 17 اکتوبر سے 14 نومبر تک ہونگے۔

      کرکبز کی ایک رپورٹ کے مطابق سیلیکٹرس اور کوچنگ میں ہونے والی بڑی تبدیلیوں کے سبب وراٹ کوہلی کے چیلنجز کافی بڑھ رہے تھے۔ اس سال فروری۔مارچ میں کوہلی کو شیکھر دھون   (Shikhar Dhawan) کو انگلیںڈ کے خلاف ونڈے سیریز کے دوران ٹیم میں شامل کرانے کو لیکر کافی جدوجہد کرنی پڑی تھی۔ سیلیکٹرس شیکھر دھون کی جگہ وجے ہزارے ٹرافی میں اچھا مظاہرہ کرنے والے اوپنر کو ٹیم میں رکھنا چاہتے تھے لیکن وراٹ کوہلی دھون کو ٹیم میں شامل کئے جانے کے حق میں تھے۔

      پانچ دن تک کرنا پڑا انتظار
      حالانکہ اس کے بعد سلیکٹرز نے سری لنکا دورے کے لیے شیکھر دھون کو ٹیم کا کپتان بنایا تھا لیکن مارچ میں ہونے والی میٹنگ کے بعد ٹیم کو اعلان اور اتفاق کرنے میں 5 دن لگے۔ تاہم ذرائع کا کہنا ہے کہ کپتان اور سلیکٹرز کے درمیان کوئی تنازعہ نہیں ہے۔ مارچ کا مسئلہ ایک استثناء ہے۔ تاہم کوہلی کے قریبی کا کہنا ہے کہ کوہلی کو کچھ ثابت کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ بی سی سی BCCI  آئی صرف کوہلی سے کچھ دباؤ کم کرنا چاہتی تھی۔

      ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ سے پہلے وراٹ کوہلی نے بڑا فیصلہ کیا ہے ۔ ہندوستانی کپتان نے اعلان کیا ہے کہ وہ اکتوبر سے ہونے والے ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ کے بعد ہندوستانی ٹی ٹوینٹی ٹیم کی کپتانی چھوڑ دیں گے ۔ وراٹ کوہلی نے سوشل میڈیا پر ٹویٹ کرکے یہ جانکاری دی کہ وہ ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ کے بعد کپتانی چھوڑ دیں گے ، لیکن وہ بطور بلے باز ٹیم کے ساتھ وابستہ رہیں گے ۔ وراٹ کوہلی کے ٹی ٹوینٹی ٹیم کی کپتانی چھوڑنے کے بعد اب یہ سوال ہے کہ آخر ان کے بعد ٹیم انڈیا کی کمان کون سنبھالے گا ؟ اس ریس سب سے آگے روہت شرما ہیں ، جن کا بطور ٹی ٹوینٹی کپتان ریکارڈ کافی اچھا ہے ۔


      وراٹ کوہلی نے اپنے ٹویٹ میں لکھا : اس فیصلہ تک میں کافی وقت لے کر پہنچا ہوں ، میں نے اپنے قریبی لوگوں سے کافی بات چیت کی ۔ روی شاستری ، روہت شرما جو ٹیم کے اہم اراکین ہیں ، ان سے بات چیت کے بعد ہی میں نے یہ فیصلہ کیا ہے ۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: