உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    IPL 2022: جن کھلاڑیوں سے فرنچائزی نے توڑا سالوں پرانا ناطہ، وہ مچا رہے ہیں نئی ٹیموں کے ساتھ دھمال

    آئی پی ایل 2022 کو شروع ہوئے دو ہفتے ہوچکے ہیں۔ اس دوران کئی نئے چہروں نے اپنی صلاحیت کا لوہا منوایا تو کئی تجربہ کار کھلاڑیوں نے بھی اپنی کارکردگی سے سب کا دل جیتا۔ اس میں وہ کھلاڑی شامل ہیں، جن سے آئی پی ایل 2022 سے پہلے فرنچائزی نے سالوں پرانا ناطہ توڑ لیا تھا۔ ایسے میں انہیں آکشن میں اتارنا پڑا اور اب یہ کھلاڑی نئی ٹیموں کی جیت کی گارنٹی بنے ہوئے ہیں۔

    آئی پی ایل 2022 کو شروع ہوئے دو ہفتے ہوچکے ہیں۔ اس دوران کئی نئے چہروں نے اپنی صلاحیت کا لوہا منوایا تو کئی تجربہ کار کھلاڑیوں نے بھی اپنی کارکردگی سے سب کا دل جیتا۔ اس میں وہ کھلاڑی شامل ہیں، جن سے آئی پی ایل 2022 سے پہلے فرنچائزی نے سالوں پرانا ناطہ توڑ لیا تھا۔ ایسے میں انہیں آکشن میں اتارنا پڑا اور اب یہ کھلاڑی نئی ٹیموں کی جیت کی گارنٹی بنے ہوئے ہیں۔

    آئی پی ایل 2022 کو شروع ہوئے دو ہفتے ہوچکے ہیں۔ اس دوران کئی نئے چہروں نے اپنی صلاحیت کا لوہا منوایا تو کئی تجربہ کار کھلاڑیوں نے بھی اپنی کارکردگی سے سب کا دل جیتا۔ اس میں وہ کھلاڑی شامل ہیں، جن سے آئی پی ایل 2022 سے پہلے فرنچائزی نے سالوں پرانا ناطہ توڑ لیا تھا۔ ایسے میں انہیں آکشن میں اتارنا پڑا اور اب یہ کھلاڑی نئی ٹیموں کی جیت کی گارنٹی بنے ہوئے ہیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی: آئی پی ایل 2022 (IPL 2022) میں جہاں کچھ ان کیپڈ کھلاڑیوں نے اپنی کارکردگی کی بدولت مداحوں اور عظیم کرکٹروں کا دل جیتا ہے۔ وہیں، کئی ایسے تجربہ کار کھلاڑی بھی اپنی چمک بکھیرنے میں کامیاب رہے، جنہیں اس سال میگا آکشن سے پہلے فرنچائزی نے ریٹین نہیں کیا۔ یا یوں کہیں کہ ان سے سالوں پرانا ناطہ توڑ لیا۔ ایسے میں انہیں نیلامی اترنا پڑا اور اس بار نئی ٹیموں کی طرف سے کھیلتے ہوئے دھمال مچا رہے ہیں۔ اس فہرست میں یجویندر چہل، کلدیپ یادو، راہل چاہر اور امیش یادو جیسے کھلاڑی شامل ہیں۔

      یجویندر چہل کو آئی پی ایل 2022 کے میگا آکشن سے پہلے رائل چیلنجرس بنگلورو نے ریٹین نہیں کیا تھا۔ ایسی خبریں بھی آئیں کہ تنخواہ کو لے کر ان کی ٹیم سے ناراضگی ہوئی تھی۔ حالانکہ یجویندر چہل نے اس بارے میں کہا کہ ان سے ٹیم نے ریٹین کے بارے میں پوچھا تک نہیں تھا۔ جبکہ وہ 2014 سے 2021 تک یعنی پورے 8 سال اس ٹیم کے ساتھ رہے اور ان سالوں میں ٹیم کے لئے سب سے زیادہ 139 وکٹ حاصل کئے۔ اتنی چمکدار کارکردگی کے باوجود ایک جھٹکے میں آر سی بی کا ان کے ساتھ 8 سال پرانا رشتہ ٹوٹ گیا۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      رمیز راجہ کو ICC نے دیا بڑا جھٹکا، جے شاہ کو ملی بڑی ذمہ داری، بارکلے اکتوبر تک بنے رہیں گے صدر

      یجویندر چہل کا نئی ٹیم کے ساتھ زبردست کارکردگی

      اس کے بعد اس لیگ اسپنر کو راجستھان رائلس نے میگا آکشن میں 6.5 کروڑ روپئے میں خریدا اور اس سیزن میں یجویندر چہل نے اب تک راجستھان کے لئے سب سے زیادہ وکٹ حاصل کئے ہیں۔ انہوں نے 4 میچ میں 7 وکٹ حاصل کئے ہیں اور سب سے زیادہ وکٹ لینے والے ٹاپ-5 گیند بازوں میں شامل ہیں۔

      کلدیپ یادو: اس چائنا مین گیند باز کا آئی پی ایل 2022 میں اب تک کارکردگی شاندار رہی ہے اور وہ پرپل کیپ کے مضبوط دعویدار بن کر ابھرے ہیں۔ کلدیپ یادو گزشتہ 4 سال سے کولکاتا نائٹ رائیڈرس کے ساتھ تھے۔ تاہم اس ٹیم کے ساتھ گزشتہ کچھ سیزن ان کے اچھے نہیں گزرے۔ وہ ٹیم کا حصہ تو رہے، لیکن میچ کھیلنے کے مواقع کم ہی ملے۔ آئی پی ایل 2021 میں تو کلدیپ یادو ایک بھی میچ میں پلیئنگ الیون کا حصہ نہیں بنے۔ اس بار میگا آکشن سے پہلے کلدیپ یادو کو کولکاتا نائٹ رائیڈرس نے ریٹین نہیں کیا۔ کولکاتا نائٹ رائیڈرس سے باہر کئے جانے کے بعد ایک انٹرویو میں کلدیپ یادو نے کہا تھا کہ انہیں نہیں معلوم کہ ان کی کیا غلطی ہے؟ بے شک، کلدیپ یادو کو اپنی غلطی کا نہیں پتہ تھا، لیکن کے کے آر ضرور کلدیپ یادو کو چھوڑنے پر پچھتا رہی ہوگی۔

      امیش یادو: ٹیم انڈیا کا یہ تیز گیند باز اس سیزن میں نئی ٹیم کولکاتا نائٹ رائیڈرس کی طرف سے کھیل رہا ہے اور نئی گیند سے بلے بازوں پر قہر برپا کر رہا ہے۔ اس کا ثبوت ہے ان کی گیند بازی کے اعدادوشمار۔ امیش یادو نے اب تک کھیلے گئے پانچ میچوں میں 10 وکٹ حاصل کئے ہیں۔ اس دوران وہ ایک میچ میں 4 وکٹ لینے کا بھی کارنامہ انجام دے چکے ہیں۔ گزشتہ سال دہلی کیپٹلس کا حصہ بننے سے پہلے تک امیش یادو تین سال تک آر سی بی کے ساتھ تھے۔ وہ دو سیزن تک اس ٹیم کے اسٹرائیک گیند باز رہے۔ پہلے سیزن میں تو انہوں نے ٹیم کے لئے 20 وکٹ بھی نکالے۔ تاہم ڈیتھ اوور کی ناکامی ان پر بھاری پڑی اور 2020 میں انہیں صرف دو میچ کھیلنے کا موقع ملا۔ سال 2021 میں دہلی کیپٹلس نے اس گیند باز کو ایک کروڑ روپئے میں خریدا۔ تاہم ایک بھی میچ میں نہیں اتارا۔ اس طرح امیش یادو نے دو سال میں صرف تین آئی پی ایل میچ ہی کھیلے۔ اس کے بعد دہلی نے ریلیز کردیا۔

      راہل چاہر: یہ لیگ اسپنر گزشتہ 4 سال سے ممبئی انڈینس کا حصہ تھا۔ تاہم اس بار میگا آکشن سے پہلے ممبئی نے اس گیند باز کو ریلیز کردیا۔ نیلامی میں پنجاب کنگس نے اس گیند باز کو 5.25 کروڑ میں خریدا اور راہل چاہر اب تک پنجاب ٹیم کی امیدوں پر کھرے اترے ہیں۔ وہ اب تک اس سیزن میں پنجاب کے لئے سب سے زیادہ وکٹ لینے والے گیند باز ہیں۔ انہوں نے 4 میچوں میں 7 وکٹ حاصل کئے ہیں۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: