உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    والد کی جوتوں کی دکان، چھوٹی بہن جرمنی کی نینشل ٹیم میں، اب IPL میں اترے گا یہ کھلاڑی 

    IPL 2022 Auction: ابھینو کے بچپن کے کوچ عرفان سیت اور ان کے والد دونوں کی بنگلورو میں قریب ہی دکانیں تھیں۔ ابھینو کے والد جوتوں کی دکان کے مالک تھے جبکہ سیت کے پاس کپڑے کی دکان تھی۔ اس کے بعد ان کی کوچنگ کا سلسلہ شروع ہوا اور آج منوہر اس مقام پر کھڑے ہیں۔

    IPL 2022 Auction: ابھینو کے بچپن کے کوچ عرفان سیت اور ان کے والد دونوں کی بنگلورو میں قریب ہی دکانیں تھیں۔ ابھینو کے والد جوتوں کی دکان کے مالک تھے جبکہ سیت کے پاس کپڑے کی دکان تھی۔ اس کے بعد ان کی کوچنگ کا سلسلہ شروع ہوا اور آج منوہر اس مقام پر کھڑے ہیں۔

    IPL 2022 Auction: ابھینو کے بچپن کے کوچ عرفان سیت اور ان کے والد دونوں کی بنگلورو میں قریب ہی دکانیں تھیں۔ ابھینو کے والد جوتوں کی دکان کے مالک تھے جبکہ سیت کے پاس کپڑے کی دکان تھی۔ اس کے بعد ان کی کوچنگ کا سلسلہ شروع ہوا اور آج منوہر اس مقام پر کھڑے ہیں۔

    • Share this:
      بنگلورو: آئی پی ایل 2022 کی نیلامی (IPL 2022 Auction) بھلے ہی ختم ہوچکی ہے۔ لیکن پہلی بار ٹی ٹوئنٹی لیگ میں داخل ہونے والے کھلاڑیوں کے لیے خوشی کا سلسلہ ابھی شروع ہوا ہے۔ اس میں ایک ابھینو منوہر (Abhinav Manohar) کا نام ہے۔ اس 27 سالہ کھلاڑی کو 5 سال قبل ٹرائلز کے دوران اچھی کارکردگی نہ دکھانے کی وجہ سے ممبئی انڈینز میں موقع نہیں مل سکا تھا۔ چھوٹی بہن شرنیا سدرنگنی (Sharanya Sadarangani) ایک بین الاقوامی کرکٹر ہیں اور جرمنی سے کھیلتی ہیں۔ والد کی جوتوں کی دکان ہے۔ ایسے میں منوہر سخت محنت کرتے رہے اور اب ان کا آئی پی ایل کھیلنے کا خواب بھی پورا ہو گیا ہے۔ ہاردک پانڈیا (Hardik Pandya) کی قیادت میں گجرات ٹائٹنز نے انہیں 2.6 کروڑ روپے میں خریدا ہے۔ ان کی بیسک قیمت صرف 20 لاکھ روپے تھی۔ معلوم ہوا ہے کہ ٹی ٹوئنٹی لیگ کے رواں سیزن سے 10 ٹیمیں میدان میں اتریں گی۔ نیلامی میں 200 سے زائد کھلاڑیوں کو خریدا گیا۔

      کرک انفو سے بات کرتے ہوئے ابھینو منوہر نے کہا، 'میں نیلامی کی وجہ سے سو نہیں سکا۔ پچھلے ایک ہفتے سے، میں رات کو مشکل سے 3 سے 4 گھنٹے سو پا رہا تھا۔ یہ جوش اور گھبراہٹ کی وجہ سے تھا۔ میرے ذہن میں یہی چل رہا تھا۔‘‘ حالانکہ ، ابھینو 3 مہینے پہلے تک یہاں آنے کا سوچ بھی نہیں سکتے تھے، کیونکہ کرناٹک کی ٹیم میں بھی ان کی جگہ پکی نہیں تھی۔ لیکن کرون نائر اچھی فارم میں نہیں تھے۔ اس کے علاوہ دیودت پڈیکل، مینک اگروال اور کے ایل راہل مشتاق علی ٹرافی کے لیے دستیاب نہیں تھے۔

      150 کے اسٹرائیک ریٹ سے 162 رنز بنائے
      ابھینو منوہر نے T20 مشتاق علی ٹرافی کے موجودہ سیزن میں بلے سے شاندار مظاہرہ کیا۔ انہوں نے 4 اننگز میں 54 کی اوسط سے 162 رنز بنائے۔ اس دوران ان کا اسٹرائیک ریٹ 150 تھا۔ 11 چوکے اور 11 چھکے لگائے۔ سوراشٹرا کے خلاف میچ میں ٹیم نے 34 رن اور 3 وکٹ گنوائے تھے۔تب بعد ابھینو نے 49 گیندوں پر ناٹ آؤٹ 70 رنز بنا کر ٹیم کو دلچسپ جیت دلائی تھی۔ 2 چوکے اور 6 چھکے لگائے۔

      ابھینو کے بچپن کے کوچ عرفان سیت اور ان کے والد دونوں کی بنگلورو میں قریب ہی دکانیں تھیں۔ ابھینو کے والد جوتوں کی دکان کے مالک تھے جبکہ سیت کے پاس کپڑے کی دکان تھی۔ اس کے بعد ان کی کوچنگ کا سلسلہ شروع ہوا اور آج منوہر اس مقام پر کھڑے ہیں۔ ابھینو منوہر کے پاس صرف 2 لسٹ اے اور 4 ٹی 20 میچوں کا تجربہ ہے۔ انہوں نے لسٹ-اے کے 2 میچوں میں صرف 34 رنز بنائے ہیں۔ ایسے میں ان کے پاس آئی پی ایل کے ذریعے خود کو ثابت کرنے کا اچھا موقع ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: