ہوم » نیوز » اسپورٹس

عرفان پٹھان نے کہا- آخری سانس تک عالمی کپ کی فتح کو یاد رکھوں گا

ہندوستانی کرکٹ ٹیم کے سابق سرکردہ آل راؤنڈر عرفان پٹھان نے سال 2007 کے عالمی کپ ٹوئنٹی ٹوئنٹی کرکٹ ٹورنا منٹ کی خطابی جیت کی یادوں کو تازہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ اپنی آخری سانس تک اس فتح کو یاد رکھیں گے۔

  • UNI
  • Last Updated: Sep 25, 2020 12:09 AM IST
  • Share this:
عرفان پٹھان نے کہا- آخری سانس تک عالمی کپ کی فتح کو یاد رکھوں گا
آخری سانس تک عالمی کپ کی فتح کو یاد رکھوں گا: عرفان پٹھان

نئی دہلی: ہندوستانی کرکٹ ٹیم کے سابق سرکردہ آل راؤنڈر عرفان پٹھان نے سال 2007 کے عالمی کپ ٹی-20 کرکٹ ٹورنا منٹ کی خطابی جیت کی یادوں کو تازہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ اپنی آخری سانس تک اس فتح کو یاد رکھیں گے۔ ہندوستانی کرکٹ کی سال 2007 کے ٹی 20 ورلڈ کپ جیتنے والی ٹیم کے ممبران اور کرکٹ شائقین نے جمعرات کو اس تاریخی فتح کی 13ویں سالگرہ کے موقع پر اپنی یادوں کو تازہ کیا۔ یہ مقابلہ آخری بال تک سنسنی خیز رہا تھا اور کرکٹ کے شائقین کے ذہن میں رچا بسا ہوا ہے اور آنے والے برسوں میں بھی اسی طرح برقرار رہے گا۔

فاتح ٹیم کے ممبر عرفان پٹھان نے بھی ایک ٹویٹ کے ذریعے اس تاریخی لمحے کو یاد کیا۔ ہندوستان کے سابق تیز گیند باز نے اس دن کے بارے میں اپنے خیالات کا تبادلہ کرتے ہوئے ٹویٹر پر یادیں تازہ کیں۔ عرفان پٹھان نے کہا کہ وہ اپنی آخری سانس تک فتح کو یاد رکھیں گے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ اس کے بعد ہندوستانی کرکٹ کی مکمل شکل ہی بدل گئی اور یہ ٹیم کی ایک مکمل اور اجتماعی کوشش تھی۔ عرفان پٹھان نے ٹویٹ کیا کہ یہ خاص دن میری آخری سانس تک مجھے یاد رہے گا۔ اس دن نے ہندوستانی کرکٹ کو یکسر بدل کر رکھ دیا جس کے بعد آنے والے کچھ اہم واقعات رونما ہوئے۔ یہ ٹورنامنٹ میں پوری ٹیم کی اجتماعی کوشش تھی ۔2007 کے ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے بعد ہندوستان نے مہندر سنگھ دھونی کی کپتانی میں 2011 کا ورلڈ کپ جیتا اور بعد میں 2013 چمپئنز ٹرافی اپنے نام کی۔




ہندوستان کے سابق تیز گیند باز نے اس دن کے بارے میں اپنے خیالات کا تبادلہ کرتے ہوئے ٹویٹر پر یادیں تازہ کیں۔
ہندوستان کے سابق تیز گیند باز نے اس دن کے بارے میں اپنے خیالات کا تبادلہ کرتے ہوئے ٹویٹر پر یادیں تازہ کیں۔

عرفان پٹھان کو 2007 کے ٹی 20 ورلڈ کپ میں عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کرنے پر مین آف دی میچ قرار دیا گیا تھا۔ انہوں نے حریف پاکستان کے خلاف فائنل میں تین وکٹیں لیں جن میں شعیب ملک ، شاہد آفریدی اور یاسر عرفات شامل تھے۔ وہ فائنل میں تین رنز پر ناقابل شکست بھی رہے۔ پاکستان کا 158 رنز کے ہدف کے تعاقب میں فائنل میچ کانٹےکی ٹکر پر پہنچ گیا ۔ سابق ہندوستانی کپتان ایم ایس دھونی نے آخری اوور جوگندر شرما کے حوالے کرنے کا فیصلہ کیا اور اس نے قومی ٹیم کے حق میں کام کیا کیونکہ ایس سریسنت نے مصباح الحق کا کیچ لیا اور قومی ٹیم کو پانچ رنز سے ٹرافی پر مہر لگانے میں مدد فراہم کی۔

Published by: Nisar Ahmad
First published: Sep 24, 2020 11:58 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading