ہوم » نیوز » اسپورٹس

عرفان پٹھان نے اشاروں میں کہا- سوسائٹی میں مسلمانوں کو گھر نہ دینا بھی نسلی تعصب

عرفان پٹھان کے مطابق یہ صرف غیر ملکی کھلاڑیوں تک ہی محدود نہیں ہے بلکہ ہندوستان کے جنوبی حصے سے تعلق رکھنے والے کھلاڑیوں کو بھی ڈومیسٹک کرکٹ میں اس طرح کی نسلی تعصب کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Jun 09, 2020 09:35 PM IST
  • Share this:
عرفان پٹھان نے اشاروں میں کہا- سوسائٹی میں مسلمانوں کو گھر نہ دینا بھی نسلی تعصب
عرفان پٹھان نے کہا کہ مجھے یاد ہے کہ جاوید میانداد نے کچھ ایسا ہی کہا تھا کہ مجھ جیسے بالر پاکستان کی ہر گلی میں پائے جاسکتے ہیں۔

نئی دہلی: ویسٹ انڈیز کے سابق کپتان ڈیرن سیمی کے نسلی تعصب سے متعلق بیان پر عرفان پٹھان اور پارتھیو پٹیل نے اپنی رائے کا اظہار کیا ہے۔ عرفان پٹھان کے مطابق یہ صرف غیر ملکی کھلاڑیوں تک ہی محدود نہیں ہے بلکہ ہندوستان کے جنوبی حصے سے تعلق رکھنے والے کھلاڑیوں کو بھی ڈومیسٹک کرکٹ میں اس طرح کی نسلی تعصب کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس موضوع پر لوگوں کو تعلیم دلانا ضروری ہے۔میں 2014 میں سیمی کے ساتھ تھا۔ مجھے لگتا ہے کہ واقعتا یہ ہوتا تو معاملہ ضرور زیر بحث آتا۔

امریکہ میں جارج فلائیڈ کی موت کے بعد سے نسل پرستی کا معاملہ زور پکڑ چکا ہے۔ کئی لوگ نسل پرستی کے معاملے پر آگے آرہے ہیں اور بات کر رہے ہیں۔ اس معاملے میں امریکہ اور کئی دیگر ممالک میں بھی مظاہرے ہورہے ہیں۔ ایسی صورتحال میں ویسٹ انڈیز کے کچھ کرکٹرز بھی اس معاملے کو سامنے لائے ہیں۔ سابق ونڈیز کپتان ڈیرن سیمی نے الزام لگایا ہے کہ انہیں اور تشارا پریرا کو آئی پی ایل کے دوران 'کالو' کہا جاتا تھا۔ سیمی کے اس بیان کے بعد کچھ ہندوستانی کرکٹرز نے اس پر اپنی رائے دی ہے۔


عرفان پٹھان کا ٹوئٹ وائرل
عرفان پٹھان کا ٹوئٹ وائرل



سیمی سن رائزرس حیدرآباد کے لئے 14-2013 کے سیزن میں کھیل چکے ہیں۔ ہندی میں ’کالو‘ کا لفظ سیاہ رنگ والے شخص کے لئے استعمال ہوتا ہے۔ انہوں نے یہ نہیں بتایا کہ ان کے خلاف یہ تبصرہ کب اور کس نےکیا۔ ویسٹ انڈیز کے آل راؤنڈر کا کہنا تھا کہ وہ اس لفظ کا صحیح معنی نہیں جانتے تھے، لیکن جب اس کے معنی جان گئے تو وہ حیران رہ گئے۔ سیمی نے کرکٹ کے اس تاریک پہلو کو ظاہر کیا۔ سیمی کے اس بیان کے بعد سن رائزرس حیدرآباد 2013-14 کے کچھ کھلاڑیوں نے اس مسئلے پر بات کی ہے۔
عرفان پٹھان نے واضح کیا کہ کیمپ میں ایسا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا۔ انہوں نے کہا کہ ایسا ضرور ہوا ہوگا اور لوگ اس کے بارے میں بات کرتے۔ تاہم سابق ہندوستانی آل راؤنڈر کا کہنا تھا کہ ہندوستانی ڈومیسٹک کرکٹ میں ایسی نسلی کہانیاں اکثر سنائی دیتی ہیں۔ انہوں نے دعوی کیا کہ جنوبی ہندوستانی کرکٹرز اکثر ایسے الفاظ کا سامنا کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں 2014 میں سیمی کے ساتھ تھا۔ میرے خیال میں واقعتا یہ ہوا ہوگا۔ اس مسئلے پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا ہوگا۔ لہذا میں ایسی چیزوں سے واقف نہیں ہوں کیوں کہ اس پر بڑے پیمانے پر بات نہیں ہوئی ہوگی ۔ لیکن اس کے ساتھ ہی ہمیں اپنے لوگوں میں بھی عام بیداری کی ضرورت ہے کیونکہ میں نے انہیں ڈومیسٹک کرکٹ میں اس طرح کے تبصرے کرتے ہوئے دیکھا ہے۔


سابق ہندوستانی آل راؤنڈر کا کہنا تھا کہ ہندوستانی ڈومیسٹک کرکٹ میں ایسی نسلی کہانیاں اکثر سنائی دیتی ہیں۔
سابق ہندوستانی آل راؤنڈر کا کہنا تھا کہ ہندوستانی ڈومیسٹک کرکٹ میں ایسی نسلی کہانیاں اکثر سنائی دیتی ہیں۔


عرفان نے کہا کہ ہمارے کچھ کرکٹرز خصوصا جنوبی ہندوستان کے ملک کے شمالی اور مغربی حصوں میں ایسی چیزوں کا سامنا کرتے ہیں۔ اگرچہ میں کسی کا نام نہیں لینا چاہتا ہوں۔ بھیڑ کے درمیان کیا ہوگا ، کوئی خود کو زیادہ عالم سمجھنے کی کوشش کرتا ہے۔ اس لئے نہیں کہ لوگ نسل پرست ہیں ، لیکن ایسا لگتا ہے کہ کوئی ایسا کچھ کہہ کر مقبول ہونے کی کوشش کرتا ہے۔ اس دوران ، وہ مذاق میں بھی اپنی لائن عبور کرجاتا ہے۔
پارتھیو پٹیل سن 2013 میں سن رائزرس کا حصہ تھے۔ انہوں نے دعوی کیا ہے کہ انہوں نے کسی بھی کھلاڑی کے ذریعہ نسل پرستی یا امتیاز کے بارے میں نہیں سنا ہے۔ تاہم وہ 2013 میں فرنچائز کھیلنے کے بعد رائل چیلنجرز بنگلور کا حصہ بن گئے تھے۔ اسی اثنا میں پارتھیو پٹیل نے کہا کہ مجھے نہیں لگتا کہ میں نے کسی کو ان (توہین آمیز) الفاظ کا استعمال کرتے ہوئے سنا ہے۔ہندوستان کے سابق کرکٹر وینوگوپال راؤ نے بھی دعویٰ کیا کہ وہ بھی اس کے بارے میں کچھ نہیں جانتے ہیں۔ . وینوگوپال
سن 2014 میں سن رائزرس سے وابستہ تھے۔ انہوں نے کہا کہ مجھے یقین نہیں ہے میں اس کے بارے میں نہیں جانتا ہوں۔
First published: Jun 09, 2020 08:57 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading