ہوم » نیوز » اسپورٹس

جنوبی افریقہ کے لیگ اسپنر عمران طاہر نے کہا- مہندر سنگھ دھونی زمین سے جڑے انسان

چنئی سپر کنگس کے جنوبی افریقہ کے لیگ اسپنر عمران طاہر نے ٹیم کے کپتان مہندر سنگھ دھونی کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ دھونی زمین سے جڑے انسان ہیں۔ عمران طاہر نے بتایا کہ انہوں نے دھونی کو ٹی وی پر دیکھا تھا، لیکن انہیں نجی طور پر ملنے کا موقع نہیں ملا تھا۔

  • Share this:
جنوبی افریقہ کے لیگ اسپنر عمران طاہر  نے کہا- مہندر سنگھ دھونی زمین سے جڑے انسان
عمران طاہر نے مہندر سنگھ دھونی زمین سے جڑے انسان

نئی دہلی: چنئی سپر کنگس کے جنوبی افریقہ کے لیگ اسپنر عمران طاہر نے ٹیم کے کپتان مہندر سنگھ دھونی کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ دھونی زمین سے جڑے انسان ہیں۔ عمران طاہر نے بتایا کہ انہوں نے دھونی کو ٹی وی پر دیکھا تھا، لیکن انہیں نجی طور پر ملنے کا موقع نہیں ملا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ وہ دھونی سے 2016 میں آئی پی ایل کے دوران ملے تھے، جب وہ پنے کے کھلاڑی تھے۔ مہندر سنگھ دھونی کے ساتھ میری پہلی ملاقات اس وقت ہوئی جب مجھے پنے کے لئے منتخب کیا گیا تھا۔ میں تھوڑا سا بے چین تھا، میں اپنے خیالات کا اظہار کرنے کا طریقہ نہیں سمجھ سکا۔

مہندر سنگھ دھونی سے اپنی پہلی ملاقات کو یاد کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس وقت کے پنے کے کپتان نے ہمارے درمیان فاصلہ کو ختم کیا اور کہا کہ میں کبھی بھی ان کے کمرے میں آسکتا ہوں۔ عمران طاہر نے کہا کہ وہ اور ساتھی چنئی سپرکنگس کے کھلاڑی دھونی کے کمرے میں وقت گزارنا پسند کرتے تھے۔




چنئی سپر کنگس کے جنوبی افریقہ کے لیگ اسپنر عمران طاہر نے ٹیم کے کپتان مہندر سنگھ دھونی کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ دھونی زمین سے جڑے انسان ہیں۔
چنئی سپر کنگس کے جنوبی افریقہ کے لیگ اسپنر عمران طاہر نے ٹیم کے کپتان مہندر سنگھ دھونی کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ دھونی زمین سے جڑے انسان ہیں۔

عمران طاہر نے کہا، لیکن میں بہت خوش تھا۔ میں اپنے کمرے کے باہر کھڑا تھا اور مہندر سنگھ دھونی اپنے کمرے میں جانے کے لئے وہاں آئے اور انہوں نے مجھے بتایا کہ عمران بھائی یہ میرا کمرا ہے اور آپ کبھی بھی یہاں آسکتے ہیں۔ عمران طاہر نے مزید کہا کہ ایم ایس دھونی جیسے افسانوی کھلاڑی کے منہ سے یہ لفظ سن کر مجھے خوشگوار احساس ہوا۔ وہ زمین سے جڑے انسان ہیں ۔ میں نے سوچا کہ اگر آپ مجھے اپنے کمرے میں بلانے کی تجویز کر رہے ہیں تو میں ضرور آپ کےکمرے میں آؤں گا۔

Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 25, 2020 03:56 PM IST