உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شرمناک: ہندوستان ہارا تو محمد شمی کو دی گئی گالیاں، نازیبا تبصرہ، پاکستانی کہہ کر کردی توہین

    شرمناک: ہندوستان ہارا تو محمد شمی کو دی گئی گالیاں

    شرمناک: ہندوستان ہارا تو محمد شمی کو دی گئی گالیاں

    ٹیم انڈیا کے تیز گیند باز محمد شمی (Mohammad Shami) کو بھی نشانہ بنایا گیا ہے۔ ان کے خلاف غلطیوں بھرے تبصرے کئے گئے ہیں۔ ان کے مسلم ہونے کی بات کو ہائی لائٹ کرکے پاکستان حامی ہونے کے الزام لگائے جا رہے ہیں۔ ایسے لوگوں نےانسٹا گرام پر محمد شمی کی پوسٹ پر جاکر تبصرہ کیا ہے۔

    • Share this:
      ہندوستان کے ٹی-20 عالمی کپ (T20 World Cup 2021) میں پاکستان کے ہاتھوں ہارنے کے بعد سوشل میڈیا پر کچھ لوگوں کے پیٹ میں کچھ زیادہ ہی مروڑ ہیں۔ کچھ لوگ اس نتیجے کے بعد کھلاڑیوں پر ذاتی حملے کر رہے ہیں اور ان کے بارے میں غلط تبصرے کر رہے ہیں۔ اس کے تحت ٹیم انڈیا کے تیز گیند باز محمد شمی (Mohammad Shami) کو بھی نشانہ بنایا گیا ہے۔ ان کے خلاف غلطیوں بھرے تبصرے کئے گئے ہیں۔ ان کے مسلم ہونے کی بات کو ہائی لائٹ کرکے پاکستان حامی ہونے کے الزام لگائے جا رہے ہیں۔ ایسے لوگوں نےانسٹا گرام پر محمد شمی کی پوسٹ پر جاکر تبصرہ کیا ہے۔ پاکستان کے خلاف مقابلے میں محمد شمی سمیت کوئی بھی ہندوستانی گیند باز نہیں چلا۔ کوئی بھی گیند باز وکٹ حاصل کرنے میں ناکام رہا، لیکن محمد شمی پر ان کے مذہب سے متعلق تبصرے کئے گئے۔

      ایک صارف نے محمد شمی کے لئے لکھا، ٹیم انڈیا میں پاکستانی۔ کسی دوسرے نے لکھا، پاکستان کے حق میں ایک مسلم، تمہیں کتنے پیسے ملے؟ یہ تو کچھ کے تبصرے ہیں۔ اس طرح کے کئی کمنٹس محمد شمی کے خلاف کئے گئے ہیں، جنہیں لکھا نہیں جاسکتا ہے۔ حالانکہ بہت سے لوگوں نے محمد شمی اور ٹیم انڈیا کی حمایت میں بات بھی کی اور لوگوں کو کھیل کا جذبہ بنائے رکھنے کو کہا۔ اس طرح کے تبصرے میں ایک صارف نے لکھا، برائے مہربانی فالتو کی باتیں مت لکھو۔ کھیل میں کچھ بھی ہوسکتا ہے، اس سے نفرت کرنا بند کرو۔

       پاکستان کے خلاف مقابلے میں محمد شمی سمیت کوئی بھی ہندوستانی گیند باز نہیں چلا۔ کوئی بھی گیند باز وکٹ حاصل کرنے میں ناکام رہا، لیکن محمد شمی پر ان کے مذہب سے متعلق تبصرے کئے گئے۔
      پاکستان کے خلاف مقابلے میں محمد شمی سمیت کوئی بھی ہندوستانی گیند باز نہیں چلا۔ کوئی بھی گیند باز وکٹ حاصل کرنے میں ناکام رہا، لیکن محمد شمی پر ان کے مذہب سے متعلق تبصرے کئے گئے۔


      میچ کی بات کریں تو بلے بازوں کی خراب کارکردگی اور گیند بازوں کی صورتحال کے موافق گیند بازی کرنے میں ناکام رہنے کے سبب ہندوستان کو پاکستان سے 10 وکٹ سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ اس سے اس کا اپنے اس سخت حریف کے خلاف گزشتہ 29 سالوں سے چلے آرہے فاتحانہ مہم بھی تھم گئی۔ ہندوستان نے عالمی کپ (ونڈے اور ٹی-20) میں 1992 کے بعد اس میچ سے پہلے تک سبھی 12 میچوں (ونڈے میں سات اور ٹی-20 میں پانچ) میں جیت درج کی تھی، لیکن پہلے شاہین آفریدی (31 رن دے کر تین) کی قیادت میں پاکستانی گیند بازوں کے سامنے اس کے بلے باز نہیں چلے۔

      بعد میں باقی کسر کپتان بابر اعظم (52 گیندوں پر ناٹ آوٹ 68 رن، 6 چوکے اور دو چھکے) اور محمد رضوان (55 گیندوں پر ناٹ آوٹ 79 رن، 6 چوکے اور تین چھکے) کی پہلے وکٹ کے لئے سنچری کی شراکت داری کی اور 10 وکٹ سے میچ جیت لیا۔ ہندوستان نے 7 وکٹ پر 151 رن بنائے تھے، لیکن پاکستان نے 17.5 اوور میں بغیر کسی نقصان کے 152 رن بناکر یکطرفہ جیت درج کرکے اپنے عالمی کپ مہم کی شاندار شروعات کی۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: