உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Dhoni Left Captaincy: ایم ایس دھونی نے CSK کی کپتانی پر لیا بڑا فیصلہ، Ravindra Jadeja کو سونپی کمان

    IPL 2022:(Dhoni Left Captaincy): مہندر سنگھ دھونی (MS Dhoni) نے اپنی کپتانی میں چنئی سپر کنگز کو چار بار آئی پی ایل چیمپئن بنایا ہے۔ CSK ممبئی انڈینز کے بعد آئی پی ایل کی تاریخ کی دوسری سب سے کامیاب ٹیم ہے۔

    IPL 2022:(Dhoni Left Captaincy): مہندر سنگھ دھونی (MS Dhoni) نے اپنی کپتانی میں چنئی سپر کنگز کو چار بار آئی پی ایل چیمپئن بنایا ہے۔ CSK ممبئی انڈینز کے بعد آئی پی ایل کی تاریخ کی دوسری سب سے کامیاب ٹیم ہے۔

    IPL 2022:(Dhoni Left Captaincy): مہندر سنگھ دھونی (MS Dhoni) نے اپنی کپتانی میں چنئی سپر کنگز کو چار بار آئی پی ایل چیمپئن بنایا ہے۔ CSK ممبئی انڈینز کے بعد آئی پی ایل کی تاریخ کی دوسری سب سے کامیاب ٹیم ہے۔

    • Share this:
      مہندر سنگھ دھونی (Dhoni Left Captaincy) نے چنئی سپر کنگز کی کپتانی چھوڑ دی ہے۔ چنئی کی کمان اب رویندر جڈیجہ (Ravindra Jadeja) کے ہاتھ میں ہے۔ مہندر سنگھ دھونی (MS Dhoni) نے اپنی کپتانی میں چنئی سپر کنگز کو چار بار آئی پی ایل چیمپئن بنایا ہے۔ CSK ممبئی انڈینز کے بعد آئی پی ایل کی تاریخ کی دوسری سب سے کامیاب ٹیم ہے۔ دھونی 2008 میں آئی پی ایل کے ابتدائی سیزن سے چنئی کی کمان سنبھال رہے تھے۔ گزشتہ سال ان کی کپتانی میں چنئی نے آئی پی ایل کا خطاب بھی جیتا تھا۔

      آئی پی ایل 2022 26 مارچ سے شروع ہو رہا ہے۔ پہلا میچ چنئی سپر کنگز اور کولکتہ نائٹ رائیڈرز کے درمیان کھیلا جائے گا۔ 40 سالہ دھونی کو آئی پی ایل میگا آکشن 2022 سے پہلے چنئی سپر کنگز نے برقرار رکھا تھا۔ ان کے ساتھ روتوراج گائیکواڑ، معین علی اور رویندر جڈیجہ کو ان کے ساتھ برقرار رکھا گیا تھا ۔ تاہم چنئی کے مالکوں نے دھونی سے زیادہ رقم رویندرا جڈیجہ کو دی تھی۔ سی ایس کے نے جڈیجہ کو 16 کروڑ جبکہ دھونی کو 12 کروڑ ملے۔

      اچانک فیصلوں کے ماہر ہیں دھونی ، کپتانی بھی کول انداز میں چھوڑ دی۔
      دھونی، جو میدان پر ہمیشہ کول رہتے ہیں، اپنے بڑے فیصلوں کے دوران بھی پرسکون نظر آتے ہیں۔ دھونی نے اس سے قبل سال 2014 میں اچانک ٹیسٹ ٹیم کی کپتانی چھوڑ دی تھی۔ اس کے بعد انہوں نے T20 ورلڈ کپ 2016 کے بعد ون ڈے اور ٹی ٹوئنٹی ٹیم کی کپتانی وراٹ کوہلی کو سونپ دی تھی۔ وہیں 15 اگست 2020 کو ریٹائرمنٹ کا فیصلہ بھی اچانک لے لیا تھا۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: