உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    On This Day: سولہ چھکوں کی مدد سے ٹھوک دیئے 254 رن، بلے بازی دیکھ کر دنیا رہ گئی حیران

    On This Day in 1995: آج ہی کے دن 1995 میں (On This Day in 1995) انہوں نے فرسٹ کلاس کرکٹ میں ایسی اننگ کھیلی تھی کہ دنیا دیکھ کر حیران رہ گئی تھی۔ اینڈریو سائمنڈس نے محض 20 سال کی عمر میں گلوسٹرشر (Gloucestershire) کی طرف سے کھیلتے ہوئے 16 چھکوں کی مدد سے ناٹ آوٹ 254 رن بنا ڈالے تھے۔

    On This Day in 1995: آج ہی کے دن 1995 میں (On This Day in 1995) انہوں نے فرسٹ کلاس کرکٹ میں ایسی اننگ کھیلی تھی کہ دنیا دیکھ کر حیران رہ گئی تھی۔ اینڈریو سائمنڈس نے محض 20 سال کی عمر میں گلوسٹرشر (Gloucestershire) کی طرف سے کھیلتے ہوئے 16 چھکوں کی مدد سے ناٹ آوٹ 254 رن بنا ڈالے تھے۔

    On This Day in 1995: آج ہی کے دن 1995 میں (On This Day in 1995) انہوں نے فرسٹ کلاس کرکٹ میں ایسی اننگ کھیلی تھی کہ دنیا دیکھ کر حیران رہ گئی تھی۔ اینڈریو سائمنڈس نے محض 20 سال کی عمر میں گلوسٹرشر (Gloucestershire) کی طرف سے کھیلتے ہوئے 16 چھکوں کی مدد سے ناٹ آوٹ 254 رن بنا ڈالے تھے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: آسٹریلیا کے سابق آل راونڈر اینڈریو سائمنڈس (Andrew Symonds) کی پہچان ہمیشہ سے ہی ایک جدوجہد کرنے والے کھلاڑی کے طور پر رہی۔ بلے بازی، گیند بازی یا فیلڈنگ کھیل کر ہر ڈپارٹمنٹ میں وہ اپنی چھاپ چھوڑنے میں کامیاب رہے۔ انہیں میدان پر نظر انداز کرنا مشکل رہتا تھا۔ حالانکہ، تنازعہ سے بھی ان کا گہرا رشتہ تھا۔ اسی وجہ سے اینڈریو سائمنڈس کا بین الاقوامی کیریئر لمبا نہیں چلا، لیکن وہ جتنے سال کھیلے، مخالف خیمے میں کھلبلی مچا کر رکھی۔

      آج ہی کے دن 1995 میں (On This Day in 1995) انہوں نے فرسٹ کلاس کرکٹ میں ایسی اننگ کھیلی تھی کہ دنیا دیکھ کر حیران رہ گئی تھی۔ اینڈریو سائمنڈس نے محض 20 سال کی عمر میں گلوسٹرشر (Gloucestershire) کی طرف سے کھیلتے ہوئے 16 چھکوں کی مدد سے ناٹ آوٹ 254 رن بنا ڈالے تھے۔ تب یہ ایک ریکارڈ تھا۔

      سال 1995 میں کاونٹی چمپئن شپ کے ایک میچ میں گلوسٹرشر اور گلے مورگن (Gloucestershire vs Glamorgan) کی ٹیمیں آمنے سامنے تھیں۔ اینڈریو سائمنڈس گلوسٹرشرکی طرف سے کھیل رہے تھے۔ میچ میں گلے مورگن کے کپتان ہیوز مارس (Hugh Morris) نے ٹاس جیت کر پہلے بلے بازی کی۔ ان کی ٹیم نے پہلی بار اننگ میں 100 اوور سے زیادہ کھیلتے ہوئے 334 رن بنائے۔ خود کپتان مارس نے نصف سنچری لگائی اور نچلے آرڈر میں آکر گیند باز ڈیرن تھامس نے بھی 8 چھکوں کی بدولت 78 رن جوڑے۔

      اینڈریو سائمنڈس چھٹے نمبر پر بلے بازی کے لئے اترے

      اب باری گلوسٹر شرکی تھی۔ ٹیم کو 11 رن کے اسکور پر ہی پہلا جھٹکا لگ گیا۔ میٹ ونڈو بغیر کھاتہ کھولے پویلین لوٹ گئے۔ اس کے بعد گلوسٹرشر کی اننگ لڑکھڑا گئی۔ 79 رن کے اندر 5 وکٹ گرگئے۔ چھٹے نمبر پر 20 سال کے اینڈریو سائمنڈس کھیلنے اترے۔ انہوں نے آتے ہی بلے سے طوفان مچا دیا۔

      سائمنڈس نے 254 میں سے 184 رن صرف باونڈری سے بنائے

      دوسرے دن کا کھیل جب ختم ہوا تو اینڈریو سائمنڈس 197 رن پر ناٹ آوٹ لوٹے۔ ان کے ساتھ ہندوستانی تیز گیند باز جواگل شری ناتھ (Javagal Srinath) بھی 33 رن پر ناٹ آوٹ تھے۔ 79 رن پر 5 وکٹ گنوانے والے گلوسٹرشر کی ٹیم کا اسکور 373/7 ہوگیا تھا۔ میچ کے تیسرے دن اینڈریو سائمنڈس نے اپنی ڈبل سنچری مکمل کی۔ گلوسٹر شر کی پہلی اننگ 461 رن پر ختم ہوئی، لیکن اینڈریو سائمنڈس 206 گیندوں میں 254 رن بناکر ناٹ آوٹ رہے۔ انہوں نے 16 چھکے اور 22 چوکے لگائے۔ یعنی 184 رن صرف باونڈری سے حاصل کئے۔ انہوں نے 4 گھنٹے سے زیادہ بلے بازی کی اور 123 سے زیادہ کے اسٹرائیک ریٹ سے رن بنائے۔

      دوسری اننگ میں بھی لگائی تھی نصف سنچری 

      اس کے بعد گلے مورگن نے دوسری اننگ میں 471 رن بنائے۔ گلوسٹرشر کو میچ کے چوتھے اور آخری دن جیت کے لئے 345 رنوں کا ہدف ملا۔ دوسری اننگ میں بھی اینڈریو سائمنڈس نے 65 گیندوں میں 76 رن بنا ڈالے۔ اس دوران انہوں نے 8 چوکے اور 4 چھکے بھی لگائے۔ یعنی 56 رن چوکے اور چھکوں سے ہی حاصل کرلئے۔ حالانکہ نچلے آرڈر کے بلے باز اس بار ان کا ساتھ نہیں دے پائے اور ٹیم 9 وکٹ کے نقصان پر 293 رن ہی بناسکی اور مقابلہ ڈرا رہا، لیکن 20 سال کے اینڈریو سائمنڈس نے اپنی بلے بازی سے سب کو حیرت میں ڈال دیا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: