உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستانی کرکٹر بگ بیش لیگ میں کھیلنے کا دیکھ رہے تھے خواب، پی سی بی نے دے دیا جھٹکا

    پاکستان کی ٹیم جہاں بابر اعظم کی قیادت میں اترے گی۔

    پاکستان کی ٹیم جہاں بابر اعظم کی قیادت میں اترے گی۔

    پاکستان کرکٹ بورڈ نے آئندہ بگ بیش لیگ میں شرکت کرنے کے لئے اپنے کھلاڑیوں کو این او سی دینے سے منع کردیا ہے۔ بورڈ نے اگلے سال ابو ظہبی میں ہونے والے نئے ٹورنا منٹ آئی ایل ٹی20 پر بھی کھلاڑیوں کی دستیابی پر کوئی وضاحت نہیں دی ہے۔

    • Share this:
      اسلام آباد: پاکستان کرکٹ بورڈ (Pakistan Cricket Board) نے آئندہ بگ بیش لیگ (Big Bash League) میں شرکت کرنے کے لئے اپنے کھلاڑیوں کو نو آبجیکشن سرٹیفکیٹ (NOC) دینے سے منع کردیا ہے۔ بورڈ نے آئندہ سال یو اے ای (UAE) میں ہونے والی نئی مقابلہ آئی ایل ٹی  20 پر بھی کھلاڑیوں کی حصولیابی پر کئی وضاحت نہیں دی ہے۔ بورڈ نے ان ٹورنا منٹ میں کھلاڑیوں کی شرکت نہیں کرنے کی مناسب وجہ بھی بتائی ہے۔ بورڈ کا کہنا ہے کہ ان کے پاس پہلے سے ہی کامپیکٹ گھریلو اور بین الاقوامی پروگرام ہیں۔ حالانکہ اب تک یہ بات صاف نہیں ہو پائی ہے کہ بغیر معاہدہ والے کھلاڑیوں پر روک کیوں لگائی جارہی ہے۔

      واضح رہے کہ بی بی ایل کے لئے ڈرافٹ ہوئے شروعاتی 98 غیر ملکی کھلاڑیوں کی فہرست میں کسی پاکستانی کھلاڑی کا نام شامل نہیں تھا، لیکن امید ظاہر کی جارہی تھی کہ ڈیڈ لائن سے پہلے کچھ کھلاڑیوں کو شامل کیا جاسکتا تھا۔ وہیں آئی ایل ٹی 20 میں اب تک رسمی طور پر کسی کھلاڑی کا نام نہیں لیا گیا ہے۔

      یہ پہلی بار نہیں ہوا ہے، جب کھلاڑیوں اور پی سی بی کے درمیان دیگر لیگ میں شامل ہونے کے لئے رضامندی نہیں بن پا رہی ہے۔ سال 2019 میں پاکستانی کھلاڑی ہڑتال کرنے کے لئے اتارو ہوگئے تھے۔ کچھ وقت سے بورڈ نے غیر ملکی لیگ میں حصہ لینے کے لئے کھلاڑیوں کے ساتھ ایک غیر رسمی ’پی ایس ایل پلس ون‘ ضابطہ معاہدے بنائے رکھا ہوا تھا، لیکن موجودہ وقت میں یہ ضابطہ جاری ہے یا نہیں، واضح نہیں ہے۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      بابر اعظم اینڈ کمپنی کو T20 World Cup 2022 سے پہلے ملی خوشخبری! 17 سال بعد ہوگا ایسا

      سال 2023 میں آئی ایل ٹی 20 کے علاوہ افریقہ ٹی20 لیگ کا بھی آغاز ہو رہا ہے۔ موجودہ وقت میں پاکستانی کھلاڑیوں کی صلاحیت کو دیکھتے ہوئے نئے لیگ میں ان کی مانگ بڑھنی لازمی ہے۔ حالانکہ پاکستان میں ضابطہ مطابق این او سی حاصل کرنے سے پہلے ڈرافٹ میں اپنا نام ڈالنے کے لئے کھلاڑیوں کو پی سی بی سے اجازت لینی پڑتی ہے۔

      پاکستانی کھلاڑی پہلے سے ہی آئی پی ایل میں نہیں شرکت کر پانے سے مایوس ہیں۔ ایسے میں اگر انہیں دیگر لیگ میں بھی کھیلنے کے لئے این او سی نہیں ملتا ہے تو انہیں بہت زیادہ نقصان ہوگا۔ بیچ میں پی سی بی کے مجوزہ منصوبہ کے تحت اپنے کھلاڑیوں کو غیر ملکی لیگ میں نہ کھیل پانے پر ان کی اقتصادی بھرپائی کروانے کی بات چلی تھی، لیکن ان لیگوں کی انعامی رقم کو دیکھتے ہوئے بات آگے نہیں بڑھ پائی ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: