உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Asia Cup 2022: ارش دیپ کو ہدف بناکر ہندوستان میں فرقہ وارانہ تشدد شروع کرنا چاہتا تھا پاکستان، ناپاک حرکت کا ہوا انکشاف

    میچ جیتنے کے بعد ارش دیپ سے متعلق پاکستان سے کئی ٹوئٹ کئے گئے۔ (فائل فوٹو)

    میچ جیتنے کے بعد ارش دیپ سے متعلق پاکستان سے کئی ٹوئٹ کئے گئے۔ (فائل فوٹو)

    Asia Cup 2022, Arshdeep Singh, Nndia vs Pakistan: ہندوستانیوں کو قصور وار ٹھہرانے کے لئے پاکستان کی طرف سے پورا منصوبہ بنایا گیا تھا اور سوشل میڈیا کے ذریعہ سے اسے انجام دیا گیا۔ ارش دیپ سنگھ سکھ طبقے سے آتے ہیں تو پاکستان نے اس کا بھی فائدہ اٹھانے کی کوشش کی اور ہندوستان میں سکھوں اور ہندووں کے درمیان فرقہ وارانہ کشیدگی بڑھانے کے لئے سوشل میڈیا کے اسٹیج کا فائدہ اٹھایا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi, India
    • Share this:
      نئی دہلی: اس وقت ایشیا کپ کرکٹ ٹورنا منٹ چل رہا ہے۔ اس مقابلے میں اب تک سب سے کانٹے کے میچ ہندوستان اور پاکستان کے درمیان کھیلے گئے میچ ہی تھے۔ مقابلہ شروع ہونے سے پہلے ہی پوری دنیا میں کرکٹ کے چاہنے والوں کو ہندوستان اور پاکستان کے میچ کا انتظار تھا۔ ٹورنا منٹ میں اب تک ہندوستان اور پاکستان کے درمیان دو بار میچ ہوچکے ہیں۔ پہلے میچ میں ہندوستان نے جیت درج کی تھی، لیکن کل اتوار کو ہوئے میچ میں پاکستان نے ہندوستان کو شکست دی۔

      اس میچ کے بعد سے کرکٹر ارش دیپ سنگھ جم کر سوشل میڈیا کی سرخی بنے ہوئے ہیں۔ اس کے پیچھے کی وجہ ہے کہ ان کے ذریعہ میچ کے آخری اووروں کے دوران ایک کیچ کو چھوڑ دینا۔ ہندوستان کی شکست کے بعد کرکٹ مداح ارش دیپ سنگھ کو نشانہ بنانے لگے۔ اتنا ہی نہیں کچھ لوگوں نے تو ویکیپیڈیا پر ان کا نام خالصتان سے بھی جوڑ دیا۔ ہندوستان کی شکست کے ساتھ ہی پاکستان نے بھی اس کا فائدہ اٹھانے کی پوری کوشش کی اور ایک بار پھر سے اپنا ناپاک ارادہ دکھا دیا۔

      اس میچ کے بعد سے کرکٹر ارش دیپ سنگھ جم کر سوشل میڈیا کی سرخی بنے ہوئے ہیں۔ اس کے پیچھے کی وجہ ہے کہ ان کے ذریعہ میچ کے آخری اووروں کے دوران ایک کیچ کو چھوڑ دینا۔
      اس میچ کے بعد سے کرکٹر ارش دیپ سنگھ جم کر سوشل میڈیا کی سرخی بنے ہوئے ہیں۔ اس کے پیچھے کی وجہ ہے کہ ان کے ذریعہ میچ کے آخری اووروں کے دوران ایک کیچ کو چھوڑ دینا۔


      ہندوستانیوں کو قصوروار ٹھہرانے کے لئے پاکستان کی طرف سے پورا منصوبہ بنایا گیا تھا اور سوشل میڈیا کے ذریعہ سے اسے انجام دیا گیا۔ ارش دیپ سنگھ سکھ طبقے سے آتے ہیں تو پاکستان نے اس کا بھی فائدہ اٹھانے کی کوشش کی اور ہندوستان میں سکھوں اور ہندووں کے درمیان فرقہ وارانہ کشیدگی بڑھانے کے لئے سوشل میڈیا کے اسٹیج کا فائدہ اٹھایا۔ ہار کے بعد ارش دیپ سنگھ کو نشانہ بنایا گیا اور ان کے ویکیپیڈیا پروفائل پر بھی کچھ تبدیلیاں کی گئی تھی۔

      ارش دیپ سنگھ کو بدنام کرنے کی جو کوشش پاکستان کی طرف سے کی جارہی ہے، اس کا تجزیہ کرنے پر پتہ چلتا ہے کہ جب ارش دیپ سنگھ میں 11.05 منٹ پر کیچ چھوڑا تھا، تب پہلا ٹوئٹ @7cking__Mad کا آیا، جنہوں نے ٹوئٹ کیا ’ارش دیپ میرے خالصتانی بھائی‘۔

      اس کے بعد جلد ہی ارش دیپ سنگھ کو خالصتانی بلانے والے ٹوئٹس کا سیلاب آگیا۔ ان میں سب سے پہلا ٹوئٹ @Hasnain Younas25 کا تھا، جنہوں نے ٹوئٹ کیا ’یہ ارش دیپ کو خالصتانی قرار دینے کا وقت ہے‘۔



      اس ٹوئٹ سے پہلے ایک پاکستانی ہینڈل @naseemakram100 نے پوچھا، ’ارش دیپ خالصتانی کا ٹرین چلنا ہے یا نہیں‘؟



      سبھی پاکستانی ہینڈل اپنی تشہیر کر رہے تھے، ایک اہم ہندوستانی ہینڈل – @thetanmay نے ٹوئٹ کیا، ’ارش دیپ کے منیجر نے اپنے فون سے ٹوئٹر اور انسٹا گرام کو ہٹا دیا‘۔



      ایک اور پاکستانی ہینڈل اچھی فالوئنگ والا ٹوئٹ کے ساتھ شامل ہونے والا اگلا تھا، جس میں لکھا تھا، ’انڈین میڈیا ٹو خالصتانی ہیرو ارش دیپ سنگھ‘۔



      لوگوں کے ساتھ پاکستانی لیڈران نے بھی کچھ ایسی ہی حرکت کی۔ ایک ٹوئٹر ہینڈل @ShaheerSialvi نے پاکستان نظریاتی پارٹی (PNP) کے صدر ہونے کا اعلان کرتے ہوئے ٹوئٹ کیا، ’ارش دیپ ہمارا اپنا خالصتانی ہے جے خالصہ۔



      ایک دیگر ٹوئٹر صارف جو کہ پاکستان سے ہی تھے انہوں نے بھی ارش دیپ کے خلاف نگیٹیو نیریٹیو بنانے کی کوشش کی۔



      ارش دیپ سنگھ سے متعلق جب اتنی باتیں ہو رہی تھیں، تبھی سابق ہندوستانی کرکٹر ہربھجن سنگھ نے ٹوئٹ کرتے ہوئے ایسے لوگوں کو پھٹکار لگائی، جو ارش دیپ کو خالصتان سے جوڑ رہے تھے۔ ہربھجن سنگھ نے کہا کہ کوئی جان بوجھ کر کیچ نہیں چھوڑتا۔ ہمیں اپنے لڑکوں پر فخر ہے۔ پاکستان نے بہتر کھیلا۔ ایسے لوگوں پر شرم آتی ہے، جو اس پلیٹ فارم پر سستی باتیں کہہ کر ہمارے ہی لوگوں کو نیچا دکھاتے ہیں، یہ لوگ ہی ارش دیپ سنگھ اور ٹیم کو ہراتے ہیں۔



      اب اس پورے معاملے پر ہندوستانی حکومت سخت ہوگئی ہے۔ تنازعہ کا نوٹس لیتے ہوئے، وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی نے وکی پیڈیا کو نوٹس بھیجا ہے۔ حکومت نے اپنے نوٹس میں کہا کہ یہ پورا معاملہ ارش دیپ سنگھ کی فیملی کے لئے خطرہ بن سکتا ہے اور اس سے ملک کا ماحول بھی خراب ہوسکتا ہے۔ ارش دیپ کے ویکیپیڈیا پروفائل پر بھی چھیڑ چھاڑ کی گئی تھی۔ آئی پی ایڈریس پتہ کرنے پر یہ معلوم ہوا کہ یہ ناپاک حرکت پاکستان کے پنجاب صوبہ سے کسی نے کی تھی۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: