ہوم » نیوز » اسپورٹس

عالمی کپ میں سچن کو آوٹ نہ کرنے سے آج تک صدمے میں پاکستانی گیند باز

 عالمی کپ کے سیمی فائنل میں پاکستان کے خلاف سچن تندولکر (Sachin Tendulkar) کو 23 رن پر سعید اجمل نے آوٹ کردیا تھا، مگر تیسرے امپائر بلی بوڈین نے ’ریوو’ کے بعد اسے پلٹ دیا تھا۔

  • Share this:
عالمی کپ میں سچن کو آوٹ نہ کرنے سے آج تک صدمے میں پاکستانی گیند باز
عالمی کپ میں سچن کو آوٹ نہ کرنے سے آج تک صدمے میں پاکستانی گیند باز

کراچی: ہندوستانی کرکٹ کی تاریخ میں 2011 عالمی کپ  (World Cup 2011) کا وہ دن ہمیشہ کے لئے درج ہوگیا، جب ٹیم انڈیا (Team India) نے پاکستان کو شکست دے کر عالمی کپ کے خطابی مقابلے میں جگہ بنائی اور پھر فائنل جیت کر دوسری بار عالمی چمپئن بنیں۔ آج بھی جب کوئی ہندوستانی اس دن کو یاد کرتا ہے تو اس کا سینہ فخر سےچوڑا ہونے کے ساتھ ہی چہرہ بھل کھل جاتا ہے۔ وہیں وہ دن پاکستان کے لئے کبھی نہ بھلا پانے والا درد بن گیا، جس درد سے عظیم کھلاڑی سعید اجمل (Saeed Ajmal) آج بھی ابھر نہیں پائے۔ سیمی فائنل میں کرکٹ کے بھگوان سچن تندولکر (Sachin Tendulkar) کو آوٹ نہ کرپانے کے سبب وہ آج بھی صدمے میں ہیں۔ پاکستان کے سابق آف اسپنر سعید اجمل عالمی کپ 2011 میں ہندوستان کے خلاف سیمی فائنل میں سچن تندولکر کا وکٹ نہیں مل پانے کی مایوسی سے اب تک نہیں ابھر پائے ہیں، کیونکہ انہیں آج بھی لگتا ہے کہ انہوں نے ہندوستانی اسٹار کو آوٹ کردیا تھا۔ انگلینڈ کے امپائر ایان گاولڈ نے بھی حال میں کہا تھاکہ تندولکر تب آوٹ تھے، لیکن تیسرے امپائر نے ان کا فیصلہ پلٹ دیا تھا۔


 بلی بوڈین نے بدل دیا تھا فیصلہ

سچن تندولکر نے موہالی میں کھیلے گئے سیمی فائنل میں 85 رن بنائے تھے، جس سے ہندوستان یہ میچ جیتنے میں کامیاب رہا تھا۔ تندولکرجب 23 رن پر کھیل رہے تھے تب گاولڈ نے سعید اجمل کی گیند پر انہیں ایل بی ڈبلیو آوٹ دے دیا تھا، لیکن تیسرے امپائر بلی بوڈین نے ’ریوو’ کے بعد اسے پلٹ دیا تھا۔ آئی سی سی ایلیٹ پینل کے رکن رہے گاولڈ نے حال میں کہا تھا کہ وہ تندولکرکو آوٹ دینے کے فیصلے پر قائم ہیں۔



سچن تندولکر نے موہالی میں کھیلے گئے سیمی فائنل میں 85 رن بنائے تھے، جس سے ہندوستان یہ میچ جیتنے میں کامیاب رہا تھا۔
سچن تندولکر نے موہالی میں کھیلے گئے سیمی فائنل میں 85 رن بنائے تھے، جس سے ہندوستان یہ میچ جیتنے میں کامیاب رہا تھا۔



یقین تھا کہ سچن تندولکر کی اننگ ختم ہوگئی



سعید اجمل نے اس حادثہ کو یاد کرتےہوئے کہا کہ وہ سیدھی گیند تھی اور وکٹوں کے آگے ان کے پیڈ سے ٹکرائی تھی۔ مجھے پورا یقین تھا کہ سچن تندولکر آوٹ ہیں۔ شاہد آفریدی، کامران اکمل، وہاب ریاض اور دیگر کھلاڑیوں نے پوچھا تھا کہ کیا سچن تندولکر آوٹ ہیں اور میں نے کہا کہ ہاں ان کی اننگ ختم ہوگئی۔ انہوں نے کہا کہ جب تیسرے امپائر نے فیصلہ بدلا تو دل ٹوٹ گیا تھا۔ سعید اجمل نے کہا کہ مجھے ٹسٹ میچوں میں کبھی انہیں گیند بازی کرنے کا موقع نہیں ملا، اس لئے مجھے جب بھی محدود اووروں کی کرکٹ میں ان کے خلاف کھیلنے کا موقع ملتا تھا تو میں اپنی سب سے بہترین کارکردگی پیش کرنا چاہتا تھا۔ ایک ٹیلی ویژن چینل سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سب سے زیادہ مایوسی یہ رہی کہ ہم سیمی فائنل میں ہار گئے اور یقینی طور پر سچن تندولکر کے 85 رن نے بڑا فرق پیدا کردیا تھا۔



عالمی کپ 2011 کے سیمی فائنل میں سچن تندولکر کو تیسرے امپائر کے ذریعہ نئی زندگی ملنے سے پاکستان کو شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ فائل فوٹو
عالمی کپ 2011 کے سیمی فائنل میں سچن تندولکر کو تیسرے امپائر کے ذریعہ نئی زندگی ملنے سے پاکستان کو شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ فائل فوٹو



تیسرے امپائر کے فیصلے سے حیران

سعید اجمل نے کہا کہ یہاں تک کہ آج بھی تیسرے امپائر کا فیصلہ مجھے حیران کردیتا ہے، لیکن اس دن قسمت ان کے ساتھ تھی اور انہوں نے اپنی ٹیم کے لئے انتہائی اہم اننگ کھیلی۔ پاکستان کی طرف سے 35 ٹسٹ، 113 ونڈے اور 64 ٹی -20 بین الاقوامی میچ کھیلنے والے سعید اجمل نے کہا کہ تیسرے امپائر کے فیصلہ پلٹنے سے گاولڈ بھی مایوس تھے۔ اس آف اسپنر کا کیریئر حالانکہ بنگلہ دیش دورے کے بعد بیچ میں ہی ختم ہوگیا۔ ان کی گیند بازی ایکشن کی 2014 میں رپورٹ کی گئی تھی، وہ اس میں سدھار نہیں کرپائے اور 2017 میں انہوں نے کرکٹ کو الوداع کہہ دیا تھا۔


 
First published: Apr 29, 2020 03:27 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading