ہوم » نیوز » اسپورٹس

پاکستان کے لئے بری خبر، 2020 میں پاکستان میں کوئی انٹرنیشنل کرکٹ نہیں

پی سی بی کے چیئرمین احسان مانی نے میڈیا کو بتایا کہ اس تناظر میں کوئی خطرہ نہیں اٹھایا جاسکتا۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ اگلے سال جب حالات بہتر ہوں گے تو بین الاقوامی میچوں کا انعقاد کیا جائے گا۔

  • Share this:
پاکستان کے لئے بری خبر، 2020 میں پاکستان میں کوئی انٹرنیشنل کرکٹ نہیں
پاکستان کورونا وائرس کے خدشے کے پیش نظر 2020 میں کسی بھی انٹرنیشنل کرکٹ ایونٹ کی میزبانی نہیں کرے گا۔

اسلام آباد: پاکستان کورونا وائرس کے خدشے کے پیش نظر 2020 میں کسی بھی انٹرنیشنل کرکٹ ایونٹ کی میزبانی نہیں کرے گا۔ پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے چیئرمین احسان مانی نے جمعرات کو میڈیا کو بتایا کہ اس تناظر میں کوئی خطرہ نہیں اٹھایا جاسکتا۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ اگلے سال جب حالات بہتر ہوں گے تو بین الاقوامی میچوں کا انعقاد کیا جائے گا۔ احسان مانی نے اس ہفتے کے شروع میں پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان سے ملاقات کی تھی۔ موجودہ صورتحال کے پیش نظر عمران کسی بھی ایوینٹ کے خلاف تھے۔ پاکستان میں کورونا معاملات 160،118 پر پہنچ چکے ہیں اور 3،093 افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں۔


سال 2020 میں ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کی امید کم: احسان مانی


پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے صدر احسان مانی نے کہا ہے کہ رواں سال اکتوبر سے نومبر میں آسٹریلیا میں ٹی-20 ورلڈ کپ ہونے کا کوئی امکان نہیں ہے۔ اس معاملے پر حتمی فیصلہ جولائی میں ہونے والے آئی سی سی کے اجلاس میں لیا جائے گا۔ احسانی مانی رواں سال ٹی20 ورلڈ کپ کے انعقاد کی مخالفت کرنے والے آئی سی سی بورڈ کے دوسرے سینئر رکن ہیں۔ان سے قبل کرکٹ آسٹریلیا کے چیئرمین بھی کہہ چکے ہیں کہ ایونٹ میں شرکت کرنے والے 16ممالک میں سے کچھ میں وائرس کے پھیلاؤ کے باعث یہ انتہائی غیر حقیقی اور انتہائی مشکل ہو گا کہ ٹورنامنٹ کو منصوبے کے مطابق منعقد کیا جائے۔واضح رہے کہ ٹی20 ورلڈ کپ رواں سال 18 اکتوبر سے 16نومبر تک آسٹریلیا میں شیڈول ہے لیکن کورونا وائرس کی وبا کی وجہ سے اس کا انعقاد مشکل نظر آتا ہے۔


احسان مانی نے کہا ہے کہ رواں سال اکتوبر سے نومبر میں آسٹریلیا میں ٹی-20 ورلڈ کپ ہونے کا کوئی امکان نہیں ہے۔

احسان مانی نے کہا ہے کہ رواں سال اکتوبر سے نومبر میں آسٹریلیا میں ٹی-20 ورلڈ کپ ہونے کا کوئی امکان نہیں ہے۔بدھ کو ورچوئل بریفنگ میں احسان مانی نے کہا کہ آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ میں کووڈ-19 پر قابو پائے جانے کے باوجود سب سے بڑا چیلنج آسٹریلیا میں ایونٹ کا انعقاد ہے، ان کی حکومت بہت محتاط ہے اور اگر ایونٹ کا انعقاد اس سال ہوا تو یہ بایو سیکیورٹی کے ساتھ منعقد ہوگا۔اس موقع پر انہوں نے پاکستانی ٹیم کے دورہ انگلینڈ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جس ہوٹل میں پاکستانی ٹیم قیام کرے گی اس میں عوام نہیں ہوں گے، یہ ایک یا دو ٹیموں تک بات ٹھیک ہے لیکن جب 12 سے 16 ٹیمیں ایک ٹی 20 ٹورنامنٹ میں شریک ہوں گی تو ایسا کرنا ناممکن ہو جائے گا لہٰذا میرا خیال نہیں کہ 2020 میں کسی آئی سی سی ایونٹ کا انعقاد مناسب ہو گا۔
احسان مانی نے کہا کہ میرے خیال میں اس ایونٹ کو ایک سال کے لیے مؤخر کردیا جائے، آئی سی سی کے پاس وقت ہے کیونکہ ایونٹس کو 2020، 2021 اور 2023 میں منعقد ہونا ہے لہٰذا بیچ میں موجود خلا کے دوران ایونٹ منعقد کرائے جاسکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ایونٹ کا انعقاد بہت بڑا خطرہ ہے کیونکہ خدانخواستہ اگر ایونٹ کے دوران کوئی کھلاڑی انفیکشن کا شکار ہوتا ہے تو اس سے بہت زیادہ افرا تفری پھیلجائے گی لہٰذا ہم خطرہ مول نہیں لے سکتے۔کرکٹ آسٹریلیا آنئدہ سال 2021 میں ٹی20 ورلڈ کپ کی میزبانی کا خواہشمند ہے لیکن اگلے سال ہندستان ایونٹ کی میزبانی کرے گا۔
First published: Jun 18, 2020 11:56 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading