உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    وراٹ کوہلی نے روہت شرما کی کپتانی میں کھیلنے پر توڑی خاموشی، جانیں ونڈے سیریز میں حصہ لیں گے یا نہیں؟

    Virat Kohli Press Conference:  ہندستانی ٹیسٹ ٹیم کے کپتان وراٹ کوہلی نے ون ڈے کی کپتانی سے ہٹائے جانے کے بعد پہلی بار وراٹ کوہلی نے کہا کہ وہ روہت شرما کی قیادت میں جنوبی افریقہ کے آئندہ دورے پر ون ڈے سیریز کھیلنے کے لیے دستیاب ہوں گے۔

    Virat Kohli Press Conference: ہندستانی ٹیسٹ ٹیم کے کپتان وراٹ کوہلی نے ون ڈے کی کپتانی سے ہٹائے جانے کے بعد پہلی بار وراٹ کوہلی نے کہا کہ وہ روہت شرما کی قیادت میں جنوبی افریقہ کے آئندہ دورے پر ون ڈے سیریز کھیلنے کے لیے دستیاب ہوں گے۔

    Virat Kohli Press Conference: ہندستانی ٹیسٹ ٹیم کے کپتان وراٹ کوہلی نے ون ڈے کی کپتانی سے ہٹائے جانے کے بعد پہلی بار وراٹ کوہلی نے کہا کہ وہ روہت شرما کی قیادت میں جنوبی افریقہ کے آئندہ دورے پر ون ڈے سیریز کھیلنے کے لیے دستیاب ہوں گے۔

    • Share this:
      Virat Kohli Press Conference: ہندستانی ٹیسٹ ٹیم کے کپتان وراٹ کوہلی نے ون ڈے کی کپتانی سے ہٹائے جانے کے بعد پہلی بار پریس کانفرنس کی۔ انہوں نے کہا کہ وہ روہت شرما کی قیادت میں جنوبی افریقہ (India vs South Africa)  کے آئندہ دورے پر ون ڈے سیریز کھیلنے کے لیے دستیاب ہوں گے۔ 16 دسمبر کو ٹیم انڈیا (team india)  جنوبی افریقہ روانہ ہوگی جہاں اسے 3 ٹیسٹ اور 3 ون ڈے میچوں کی سیریز کھیلنی ہے۔ ٹیسٹ سیریز کا آغاز 26 دسمبر سے ہوگا۔

      جب وراٹ  کوہلی سے پوچھا گیا کہ کیا وہ ونڈے سیریز سے باہر ہوں گے تو انہوں نے جواب دیا، ’’میں انتخاب کے لیے دستیاب ہوں۔ آپ کو یہ سوال نہیں پوچھنا چاہیے۔ آپ ان لوگوں سے پوچھیں جو یہ اور ان کے ذرائع بتا رہے ہیں۔ جہاں تک میرا سوال ہے، میں انتخاب کے لیے ہمیشہ دستیاب ہوں۔ گزشتہ وقت سے میرے بارے میں جو کچھ بھی کہا جا رہا ہے وہ بالکل قابل اعتبار نہیں ہے۔ میں ون ڈے میچز کے لیے دستیاب ہوں اور میں ہمیشہ سے کھیلنے کا منتظر تھا۔


      اس کے علاوہ کوہلی Virat Kohli  نے کہا کہ روہت شرما کی غیر موجودگی میں مینک اگروال اوپننگ کریں گے۔ دوسرے اوپنر کے ایل راہل ہوں گے۔

      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: