உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    انگلش کرکٹر عظیم رفیق پر لگا کم عمر کی لڑکی کو ’فحش پیغام‘ بھیجنے کا الزام، یہ ہے پورا معاملہ

    انگلش کرکٹر عظیم رفیق پر لگا کم عمر کی لڑکی کو ’فحش پیغام‘ بھیجنے کا الزام، یہ ہے پورا معاملہ

    انگلش کرکٹر عظیم رفیق پر لگا کم عمر کی لڑکی کو ’فحش پیغام‘ بھیجنے کا الزام، یہ ہے پورا معاملہ

    انگلش کرکٹر عظیم رفیق (Azeem Rafiq) پر 6 سال پہلے ایک کم عمر لڑکی کو فحش پیغام بھیجنے کا الزام لگا ہے۔ دونوں کی ملاقات مینچسٹر سے دبئی کی فلائٹ میں ہوئی تھی۔ گزشتہ کچھ دنوں سے یارک شر کے سابق کرکٹر عظیم رفیق نسل واد کے الزامات کے سبب سرخیوں میں ہیں۔

    • Share this:
      لندن: یارک شر کے سابق کرکٹر عظیم رفیق (Azeem Rafiq) پر 6 سال پہلے ایک کم عمر لڑکی کو فحش پیغام بھیجنے کا الزام لگا ہے۔ دراصل، رفیق عظیم گزشتہ کچھ وقت سے نسل واد (racism) کے الزامات کے سابب سرخیوں میں بنے ہوئے ہیں۔ گزشتہ دنوں انہوں نے ڈیجیٹل، کلچر، میڈیا اور اسپورٹس کمیٹی (DCMS) میں برطانیہ کے اراکین پارلیمنٹ کے سامنے سماعت کے دوران کلب میں نسل واد اور تعصب کے اپنے تجربات کے بارے میں بتایا تھا۔

      اب ان پر سنگین الزام لگا ہے۔ یارک شر پوسٹ کی رپورٹ کے مطابق، 16 سال کی یارک شر کی رہنے والے ایشیائی نژاد کی کم عمر لڑکی عظیم رفیق سے ملی تھی۔ حالانکہ انہوں نے بتایا کہ ’تھوڑی بڑی‘ دکھنے کے لئے انہوں نے عظیم رفیق کو اپنی عمر 17 سال بتائی تھی۔

      فلائٹ میں ہوئی تھی ملاقات

      رپورٹ کے مطابق، انہوں نے الزام لگایا کہ عظیم رفیق نے مینچسٹر سے دبئی کی پرواز میں ملنے کے تین ماہ بعد دسمبر 2015 میں انہیں نامناسب واٹس اپ پیغام بھیجے۔ اس کے علاوہ انہوں نے دبئی میں رات کے کھانے کے لئے عظیم رفیق کی دعوت کو بھی مسترد کردیا تھا۔ انہوں نے عظیم رفیق کے موبائل نمبر سے دسمبر 2015 میں بھیجے گئے پیغام کے اسکرین شاٹ اخبار کو دیئے، جس میں نازیبا الفاظ کا استعمال تھا۔ انہوں نے کہا کہ میں ان پیغام کی بربریت سے حیران تھی۔ وہ کافی فحش تھے۔

      عظیم رفیق کے ترجمان نے اس بارے میں پوچھے جانے پر اخبار سے کہا کہ یہ معاملہ ان کے سامنے جمعہ کی دیر شام کو آیا ہے۔ انہیں اس پر غور کرنے کی ضرورت ہے، اس لئے ابھی تبصرہ نہیں کرسکتے۔ عظیم رفیق نے گزشتہ دنوں انکشاف کیا تھا کہ ایشیائی نژاد کے کھلاڑیوں کو کیون نام سے بلایا جاتا تھا۔ یارک شر (Yorkshire) کے لئے کھیلنے کے دوران انہیں اکثر ’پاکی‘ کہا جاتا تھا اور افسران نے اس کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی۔ اتنا ہی نہیں انہوں نے کہا کہ جب وہ 15 سال کے تھے، جب انہیں زبردستی شراب بھی پلائی گئی تھی۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: