உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Raja Singh’s arrest timeline: آخر حیدرآباد میں راجہ سنگھ کا تنازعہ کیوں اور کس طرح ہوا شروع؟ جانیے مکمل ٹائم لائن

    ایم ایل اے راجہ سنگھ

    ایم ایل اے راجہ سنگھ

    Raja Singh’s arrest timeline: ٹی راجہ سنگھ کو یوٹیوب ویڈیو میں پیغمبر اسلام حضرت محمد ﷺ کے خلاف توہین آمیز تبصروں کے بعد آخر کار پریوینٹیو ڈیٹینشن ایکٹ (PD Act) کے تحت گرفتار کیا گیا۔ حیدرآباد پولیس نے سنگھ کے خلاف متعدد مقدمات درج کیے جانے کے تین دن بعد یہ کاروائی کی، جس میں ان کے کئی سابقہ کیس بھی شامل ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Hyderabad | Maharashtra | West Bengal | Mumbai | Delhi
    • Share this:
      Raja Singh’s arrest timeline: حیدرآباد کے گوشہ محل حلقہ سے بی جے پی کے معطل شدہ ایم ایل اے راجہ سنگھ (Raja Singh) کو جمعرات یعنی 25 اگست 2022 کے روز بالآخر ’’دیر آید درست آید‘‘ کی مانند دوبارہ گرفتار کرلیا گیا۔ اس سے دو دن قبل راجہ سنگھ نے پیر کی رات حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کرتے ہوئے اپنے یوٹیوب چینل میں ویڈیو اپلوڈ کیا۔ جس کے بعد سے حیدرآباد کے نوجوان شہر کے مختلف حصوں میں شدید برہمی کے ساتھ راجہ سنگھ کے خلاف مظاہرے کیے اور سنگھ کی گرفتاری کے لیے احتجاج کیا۔

      ٹی راجہ سنگھ کو یوٹیوب ویڈیو میں پیغمبر اسلام حضرت محمد ﷺ کے خلاف توہین آمیز تبصروں کے بعد آخر کار پریوینٹیو ڈیٹینشن ایکٹ (PD Act) کے تحت گرفتار کیا گیا۔ حیدرآباد پولیس نے سنگھ کے خلاف متعدد مقدمات درج کیے جانے کے تین دن بعد یہ کاروائی کی، جس میں ان کے کئی سابقہ کیس بھی شامل ہے۔

      یہ پورا واقعہ کس طرح رونما ہوا اور کب کب کیا ہوا؟ اسی ضمن میں تفصیلات پیش ہیں:

      اگست 11: راجہ سنگھ نے اسٹینڈ اپ کامیڈین منور فاروقی (Munawar Faurqui) کے شو کو روکنے کی دھمکی دی جو 20 اگست کو حیدرآباد میں طئے تھا۔ راجہ سنگھ نے کہا کہ کوئی بھی ہندوں کے بھگوانوں کے خلاف کچھ بھی کہے تو اسے اسی کی زبان میں جواب دیا جائے گا۔

      اگست 19: اس دن راجہ سنگھ شلپاکالا ویدیکا کے سیٹ کو جلانے کی کوشش کر رہے تھے، اس کے اگلے دن منور فاروقی کا شو طئے تھا، یہ وہی مقام ہے، جہاں کامیڈین منور فاروقی کا شو ہونا تھا۔ اس دوران سٹی پولیس نے سنگھ کو اپنی تحویل میں لے لیا۔

      اگست 20: راجہ سنگھ کو حیدرآباد پولیس نے جمعہ کے روز گھر میں نظر بند کر دیا تھا، جس دن شو ہورہا تھا۔ سخت حفاظتی انتظامات کے درمیان سائبرآباد پولیس نے بھارتیہ جنتا پارٹی (BJP) اور بھارتیہ جنتا یووا مورچہ کے 20 کارکنوں کو اس وقت حراست میں لے لیا جب انہوں نے ہفتہ کی شام شلپا کلا ویدیکا میں اسٹینڈ اپ کامیڈین منور فاروقی کے شو میں خلل ڈالنے کی کوشش کی۔

      اگست 21: منور فاروقی کا شو ختم ہونے کے بعد راجہ سنگھ نے اپنے یوٹیوب چینل جئے شری رام چینل تلنگانہ پر ایک ویڈیو پوسٹ کیا جس میں اس نے مسلمانوں اور پیغمبر اسلام محمد ﷺ کے خلاف کئی رکیک اور توہین آمیز تبصرے کیے۔ سنگھ کی ویڈیو منظر عام پر آنے کے بعد حیدرآباد شہر میں احتجاج شروع ہوگیا۔

      اگست 22: عوام نے شہر کے پولیس کمشنر سی وی آنند کے دفتر کے باہر راجہ سنگھ کی گرفتاری کا مطالبہ کیا اور منگل کو شہر کے کئی علاقوں میں بھی اجتجاج جاری رہا۔ ساؤتھ زون کی پولیس نے منگل کی صبح گوشہ محل کے بی جے پی ایم ایل اے کے خلاف پیغمبر اسلام کی شان میں توہین آمیز ریمارکس کے ضمن میں ایف آئی آر درج کی۔

      اگست 23: راجہ سنگھ کو حیدرآباد پولیس نے گرفتار کر لیا۔ سنگھ کی گرفتاری کے چند گھنٹوں کے بعد پولیس کے طریقہ کار میں خامیوں کی وجہ سے سنگھ کو نامپلی کورٹ نے ضمانت پر رہا کر دیا۔ اس کے بعد عوام نے جوش و خروش کے ساتھ دوبارہ احتجاج کیا اور حیدرآباد کے مختلف علاقوں میں رات بھر احتجاج جاری رہا اور 40 سے زائد افراد کو پولیس نے حراست میں لے لیا۔

      اگست 24: راجہ سنگھ کی رہائی کا جشن منانے کی تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد کئی مقامات پر ایک بار پھر احتجاج شروع ہوا۔ مظاہرین نے ان کی گرفتاری کا مطالبہ کیا۔ اس دن رات میں میڈیا رپورٹس کے مطابق درجنوں نوجوانوں کو گرفتار کیا گیا، جس کی وجہ سے شہر میں عوام کے درمیان تشویش میں اضافہ ہوا۔

      یہ بھی پڑھیں:

      Raja Singh: راجہ سنگھ منگل ہارٹ پولیس اسٹیشن کا روڈی شیٹر، حیدرآباد پولیس کا دعویٰ، PD ایکٹ کا نفاذ

      اگست 25: جمعرات کو صبح ہی سے یہ خبریں گردش کررہی تھی کہ آج کسی بھی دن ٹی راجہ کو گرفتار کیا جاسکتا ہے۔ جمعرات کو ہی ٹی راجہ نے بھی ٹوئٹر پر ایک ویڈیو شیئر کرتے ہوئے اپنے گرفتاری کو ٹی آر ایس کی انا کا مسئلہ بتایا۔ راجہ سنگھ کو ایک بار پھر پریوینٹیو ڈیٹینشن (PD) ایکٹ کے تحت گرفتار کیا گیا اور چرلہ پلی جیل منتقل کردیا گیا۔

      یہ بھی پڑھیں:

      Hyderabad : ٹی راجا سنگھ کے خلاف احتجاج جاری ، درجنوں مظاہرین کو کیا گیا گرفتار

      اگست 26: آج یعی جمعہ کی صبح شہر حیدرآباد میں ہر جگہ پرسکون ماحول ہے اور مسلمانوں کو کہا گیا ہے کہ وہ مقامی مساجد میں ہی نماز ادا کریں اور نماز کے بعد گھر واپس جائے۔ اس دوران کسی بھی طرح کا احتجاج نہ کریں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: