உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ’یہ ہے ماں کی جواں مردی اور محبت‘ بچے کو سینے سے لگا کر ای رکشہ چلا رہی ہے ماں!

    وہ اپنے بچے کو اچھی تعلیم دلانے کے لیے پرعزم ہے۔

    وہ اپنے بچے کو اچھی تعلیم دلانے کے لیے پرعزم ہے۔

    Single Mother Drives E rickshaw: وہ 600 سے 700 روپے کے درمیان روزانہ کماتی ہیں، جس میں سے تقریباً نصف اس قرض کی ادائیگی پر خرچ ہو جاتا ہے جو اس نے ای رکشہ خریدنے کے لیے لیا تھا۔ چنچل کے پاس شاید کوئی سہارا نہ ہو، لیکن وہ اپنے بچے کو اچھی تعلیم دلانے کے لیے پرعزم ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu | Hyderabad | Mumbai | Delhi | Lucknow
    • Share this:
      جب حالات ساتھ نہ دیں اور سب کچھ ٹھیک نہ چل رہا ہو، تو زندگی کے چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہوتا۔ بالکل اسی طرح جیسے اتر پردیش کے نوئیڈا سے تعلق رکھنے والی یہ خاتون ہیں۔ 27 سال کی ای رکشہ ڈرائیور چنچل شرما (Chanchal Sharma) دو وجوہات کی بنا پر نوئیڈا کی سڑکوں پر لوگوں سے داد و تحسین وصول کررہی ہیں۔ سب سے پہلے وہ سڑکوں پر شائد ایسی واحد خاتون ہے، جو کہ ای-رکشہ ڈرائیور ہے اور دوسرا یہ کہ وہ اپنے معمول کے مطابق اس دوران بھی بچے کی دیکھ بھال سے غفلت نہیں برتی ہے۔

      ٹائمز آف انڈیا کے مطابق چنکل نوئیڈا کی سڑکوں پر اپنا ای-رکشہ چلاتی ہے جس میں اس کے ایک سالہ بچے کو اس کے سینے سے چمٹا ہوا دیکھا جاسکتا ہے۔ گویا ماں زندگی کی دوڑ میں پیسنہ بہاتے ہوئے روزی روٹی کماتی ہے تو اس کی اولاد اس موقع پر محبت و شفقت کی آغوش میں ہوتی ہے۔ یہ خاتون اب اپنے شوہر سے الگ ہو چکی ہے، اس کے پاس کوئی جگہ نہیں ہے جہاں وہ اپنے بچے کو یقین کے ساتھ رکھے۔ اس کے بجائے اس نے فیصلہ کیا کہ وہ جہاں بھی جاتی ہے اسے لے جاتی ہے۔

      چنچل کو اس مسئلے کا سامنا کرنا پڑا کہ کسی طرح اپنی اور بچہ کی ضروریات کو پورا کیا جائے۔ جب اس کے یہاں بیٹے کی پیدائش ہوئی تو اس نے نوکری کی تلاش شروع کی لیکن اس نے ای رکشہ ڈرائیور بننے کا فیصلہ کیا، جس کی وجہ سے وہ اپنی معاشی ضروریات کی تکمیل کررہی ہے۔ اس خاتون ای رکشہ ڈرائیور کو ہر طرف سے سراہا جارہا ہے۔

      چنچل نے کہا کہ جن مسافروں نے ان کی گاڑی پر سواری کی ہے، انہوں نے خود ان کی تعریف کی ہے۔ یہاں تک کہ خواتین مسافر بھی ان کے ساتھ سفر کرنے کو ترجیح دیتی ہیں۔ چنچل اپنی ماں کے ساتھ ایک کمرے کے گھر میں رہتی ہے۔ لیکن جب اس کی ماں سبزی بیچنے جاتی ہے تو وہاں کوئی نہیں ہوتا جو بچے کی دیکھ بھال کر سکے۔ یہی وجہ ہے کہ جب وہ گاڑی چلاتی ہے تو وہ اپنے بیٹے کو ساتھ لے جاتی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں: 

      اگرچہ وہ بچے کو اپنی ماں یا بہن کے پاس چھوڑ دیتی ہے جو کچھ مواقع پر گھر پر رہتی ہے، لیکن یہ اکثر ممکن نہیں ہوتا۔ ایک مہینے میں صرف 2 تا 3 دن ایسا کرپاتی ہے۔ وہ اپنی زندگی میں مصروف رہتے ہیں، اس لیے انھیں بچہ کی پرورش کے لیے وقت نہیں ملتا۔ جنچل نے نوئیڈا کی گرمیوں کی لہروں کے دوران سڑکوں پر گاڑی چلانا بھی یاد کیا، لیکن اس کے پاس کوئی اور آپشن نہیں تھا۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      وہ 600 سے 700 روپے کے درمیان روزانہ کماتی ہیں، جس میں سے تقریباً نصف اس قرض کی ادائیگی پر خرچ ہو جاتا ہے جو اس نے ای رکشہ خریدنے کے لیے لیا تھا۔ چنچل کے پاس شاید کوئی سہارا نہ ہو، لیکن وہ اپنے بچے کو اچھی تعلیم دلانے کے لیے پرعزم ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: