உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بنگال کے زائرین نے ہائی وے  کے کنارے پڑھی نماز، وشو ہندو پریشد نے کان پکڑواکر کروائی اوٹھک۔بیٹھک

     سڑک پر نماز پڑھنے والے لوگوں کا کہنا ہے کہ انہیں اتر پردیش کے قوانین کا علم نہیں تھا جس کی وجہ سے ان سے یہ غلطی ہوگئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی وشو ہندو پریشد کے کارکنوں نے اتر پردیش کی سرزمین پر کہیں بھی نماز ادا کرنے کے خلاف خبردار کیا۔

    سڑک پر نماز پڑھنے والے لوگوں کا کہنا ہے کہ انہیں اتر پردیش کے قوانین کا علم نہیں تھا جس کی وجہ سے ان سے یہ غلطی ہوگئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی وشو ہندو پریشد کے کارکنوں نے اتر پردیش کی سرزمین پر کہیں بھی نماز ادا کرنے کے خلاف خبردار کیا۔

    سڑک پر نماز پڑھنے والے لوگوں کا کہنا ہے کہ انہیں اتر پردیش کے قوانین کا علم نہیں تھا جس کی وجہ سے ان سے یہ غلطی ہوگئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی وشو ہندو پریشد کے کارکنوں نے اتر پردیش کی سرزمین پر کہیں بھی نماز ادا کرنے کے خلاف خبردار کیا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Uttar Pradesh, India
    • Share this:
      یوپی کے شاہجہاں پور میں اس وقت ہنگامہ کھڑا ہو گیا جب کولکاتہ سے اجمیر جا رہے زائرین کو نیشنل ہائی وے پر سڑک کے کنارے نماز پڑھتے ہوئے دیکھا گیا۔ سڑک پر نماز پڑھتے دیکھ کر وشو ہندو پریشد کے کارکنوں نے ہنگامہ جم کر ہنگامہ کھڑا کردیا۔ اس دوران وشو ہندو پریشد کے کارکنوں نے نماز پڑھنے والے لوگوں سے ان کے کان پکڑوا کر اوٹھک بیٹھک لگوائی۔ ہنگامہ کی اطلاع پر پہنچی پولیس نے 17 نمازیوں کا چالان تک کاٹ دیا۔ پولیس نے بس کو ہائی وے کے کنارے کھڑا کرنے پر گاڑی کا چالان بھی کاٹا ۔
      یہ پورا معاملہ تلہار تھانے کے نیشنل ہائی وے۔ کے کچیانہ کھیڑا کے قریب کا ہے جہاں مسافروں کے ساتھ کولکاتہ سے اجمیر جا رہی بس منگل کی دیر شام ڈھابے پر رکی تھی۔ اس دوران بس میں سوار مسافروں نے نیشنل ہائی وے کے کنارے سڑک پر کپڑا بچھا کر نماز پڑھنا شروع کر دی۔ اس دوران وہاں سے گزر رہے وشو ہندو پریشد کے لوگوں نے ان کا ویڈیو بنا لیا۔ سڑک پر نماز پڑھتے دیکھ کر وشو ہندو پریشد کے کارکنوں نے ہنگامہ کھڑا کردیا۔ حالانکہ زائرین نے اپنی غلطی پر کان پکڑ کر معافی مانگی لیکن وشو ہندو پریشد کے کارکنوں نے ان سے کان پکڑواکر اوٹھک بیٹھک بھی لگوائی اور اتر پردیش میں ایسا نہ کرنے کی تنبیہ دے ڈالی۔

      گیانواپی معاملہ: الہ آباد ہائی کورٹ پہنچا ہندو فریق، کیویٹ داخل کرکے کیا یہ مطالبہ

      الرٹ! کار کی پچھلی سیٹ پر بیٹھنے والے بھی دھیان دں، ورنہ لگ جائے گا 1 ہزار کا جھٹکا



      دوسری جانب اطلاع ملتے ہی پولیس بھی موقع پر پہنچ گئی اور تمام زائرین کو بس میں بھر کر تھانے لے جایا گیا۔ جہاں پولیس نے امن کی خلاف ورزی پر 17 زائرین کے چالان کاٹ دیا۔ اس کے علاوہ بس کا چالان بھی کاٹا گیا۔ سڑک پر نماز پڑھنے والے لوگوں کا کہنا ہے کہ انہیں اتر پردیش کے قوانین کا علم نہیں تھا جس کی وجہ سے ان سے یہ غلطی ہوگئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی وشو ہندو پریشد کے کارکنوں نے اتر پردیش کی سرزمین پر کہیں بھی نماز ادا کرنے کے خلاف خبردار کیا۔ انہوں نے کہا کہ اتر پردیش حکومت نے سڑک پر نماز پڑھنے پر پابندی لگا دی ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: