اپنا ضلع منتخب کریں۔

    نارکو ٹیسٹ اور پولی گراف ٹیسٹ میں کیا ہے فرق؟ کیا یہ ٹسٹ حقیقی مجرم کو پکڑنے میں مدد کرتا ہے؟

    ٹیسٹ کے نتائج کو اعترافات نہیں سمجھا جا سکتا

    ٹیسٹ کے نتائج کو اعترافات نہیں سمجھا جا سکتا

    سپریم کورٹ نے سیلوی بمقابلہ ریاست کرناٹک اور این آر کیس (2010) میں فیصلہ دیا کہ ملزم کی رضامندی کے بغیر جھوٹ پکڑنے والے ٹیسٹ نہیں کرائے جائیں۔ رضاکاروں کے پاس وکیل تک رسائی بھی ہونی چاہیے اور اس ٹیسٹ کے جسمانی، جذباتی اور قانونی مضمرات کو پولیس اور وکیل نے بیان کیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Mumbai | Karnataka | Hyderabad | Lucknow | Jammu
    • Share this:
      رپورٹس میں کہا گیا ہے کہ دہلی پولیس آفتاب امین پونا والا (Aaftab Amin Poonawala) کا نارکو اور پولی گراف ٹیسٹ (Narco and Polygraph) کروانا چاہتی ہے، جس پر اپنے ساتھی کو قتل کرنے اور اس کے جسم کے اعضاء جنوبی دہلی کے چھتر پور کے جنگلاتی علاقے میں پھینکنے کا الزام ہے۔ ایک پولیس اہلکار نے پی ٹی آئی کو بتایا کہ پولیس والوں نے نارکو ٹیسٹ کے لیے عدالت میں درخواست دی ہے اور اس کی اجازت کا انتظار ہے

      آخر نارکو ٹسٹ کیا ہے؟ کیا نارکو اور پولی گراف ٹیسٹ الگ الگ ہے اور ان میں کیا فرق ہے؟ اس بارے میں تفصیلات پیش ہیں:

      نارکو اور پولی گراف ٹیسٹ کیا ہیں؟

      سوڈیم پینٹوتھل کو ترتھ سیرم بھی کہا جاتا ہے، یہ منشیات کے تجزیہ کے ٹیسٹ میں استعمال ہوتا ہے۔ یہ دوا ایک فرد کے خود شعور کو کم کرتی ہے، جس سے وہ آزادانہ طور پر بات کر سکتا ہے۔ جب کوئی شخص خود شعور کھو دیتا ہے اور لاشعوری کی حالت میں داخل ہوتا ہے تو اس کا امتحان ہوتا ہے۔ ممتحن اب اس موضوع پر سوال کر سکتے ہیں اور حقیقی جوابات حاصل کر سکتے ہیں۔

      جب یہ ٹیسٹ کروایا جاتا ہے تو صرف ایک ماہر نفسیات، تفتیشی افسر یا فرانزک ماہر موجود ہوتا ہے۔ تلنگانہ ٹوڈے کے مطابق یہ تفتیشی ایجنسیوں کے ذریعہ استعمال کیے جانے والے دیگر معروف تھرڈ ڈگری علاج کا ایک قابل عمل متبادل ہے۔ جھوٹ پکڑنے والے کو پولی گراف بھی کہا جاتا ہے۔ یہ ایک ایسا آلہ ہے جو جسمانی مظاہر جیسے کہ بلڈ پریشر، نبض کی شرح اور انسانی حرکات اور سانس لینے کو ریکارڈ کرتا ہے۔ اس کے بعد ڈیٹا کا استعمال اس بات کا تعین کرنے کے لیے کیا جاتا ہے کہ وہ شخص جھوٹ بول رہا ہے یا نہیں۔ برٹانیکا میں بتایا گیا ہے کہ جھوٹ پکڑنے والا ماہرین نفسیات کے درمیان اب بھی متنازعہ ہے اور یہ ہمیشہ عدالتی طور پر قابل قبول نہیں ہوتا ہے۔ جو 1924 سے پولیس کی تفتیش اور تحقیق میں استعمال ہوتا رہا ہے

      ٹیسٹ اور قوانین کے تناظر میں کیا فرق ہے؟

      جب کہ نارکو ٹیسٹ میں اس شخص کے شعور کو تبدیل کرنے کے لیے منشیات کا طریقہ استعمال کرتا ہے جس سے سوال کیا جاتا ہے۔ پولی گراف ٹیسٹ ’’سچ‘‘ کا تعین کرنے کے لیے اس شخص کے جسمانی نشانات پر انحصار کرتا ہے۔ ان طریقوں میں سے کوئی بھی سائنسی طور پر ثابت نہیں ہوا ہے کہ کامیابی کی شرح 100 فیصد ہے، اور یہ طبی میدان میں بھی متنازعہ ہیں۔

      سپریم کورٹ نے سیلوی بمقابلہ ریاست کرناٹک اور این آر کیس (2010) میں فیصلہ دیا کہ ملزم کی رضامندی کے بغیر جھوٹ پکڑنے والے ٹیسٹ نہیں کرائے جائیں۔ رضاکاروں کے پاس وکیل تک رسائی بھی ہونی چاہیے اور اس ٹیسٹ کے جسمانی، جذباتی اور قانونی مضمرات کو پولیس اور وکیل نے بیان کیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      ٹیسٹ کے نتائج کو اعترافات نہیں سمجھا جا سکتا، لیکن اس طرح کے رضاکارانہ طور پر کیے گئے ٹیسٹ کے نتیجے میں دریافت ہونے والی کوئی بھی معلومات یا مواد بطور ثبوت تسلیم کی جاسکتی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: