ممبئی یونیورسٹی کی کتابوں سے نہرو کا نام غائب، گاندھی پر قابل اعتراض تبصرہ

ممبئی : راجستھان کے بعد اب مہاراشٹر میں یونیورسٹی کے کتابوں سے جواہر لال نہرو کے نام کو غائب کئے جانے پر ہنگامہ مچ گیا ہے ۔

May 18, 2016 11:42 PM IST | Updated on: May 18, 2016 11:42 PM IST
ممبئی یونیورسٹی کی کتابوں سے نہرو کا نام غائب، گاندھی پر قابل اعتراض تبصرہ

ممبئی : راجستھان کے بعد اب مہاراشٹر میں یونیورسٹی کے کتابوں سے جواہر لال نہرو کے نام کو غائب کئے  جانے پر ہنگامہ مچ گیا ہے ۔ پولیٹکل سائنس کے ایم اے پارٹ 1 کی کتابوں سے جواہر لال نہرو کے تمام چیپٹر ہٹا دیے گئے ہیں ۔ اس کے ساتھ ہی مہاتما گاندھی اور تلک پر بھی قابل اعتراض تبصرے کئے گئے ہیں ۔ یونیورسٹی نے اس معاملے کی تحقیقات کے لیے ایک کمیٹی تشکیل کی  ہے ۔ کانگریس نے سازش کے تحت نہرو کی تاریخ مٹانے کا الزام فڑنویس حکومت پر لگایا ہے ۔

ممبئی یونیورسٹی کے ایم اے پارٹ 1 پولیٹکل سائنس کی کتابوں میں ملک کے پہلے وزیر اعظم جواہر لال نہرو کا ذکر تک نہیں ہے ۔ جدید انڈین پولٹيكل تھاٹ نام کی اس کتاب میں کئی بڑے مجاہدین آزادی اور رہنماؤں کا ذکر ہے، لیکن جواہر لال نہرو کے نام پر نہ تو کوئی باب ہے اور نہ ہی کتاب کے کسی صفحے پر ان کا ذکر ہے۔  صرف نہرو ہی نہیں بلکہ اس کتاب میں مہاتما گاندھی اور بال گنگادھر تلک کو اینٹی سیکولر بتایا گیا ہے ۔ اس کتاب کے سامنے آنے کے بعد کانگریس نے بی جے پی کے خلاف مورچہ کھول دیا ہے ۔ کانگریس نے الزام لگایا ہے کہ بی جے پی جان بوجھ کر نہرو کا نام کتابوں سے نکال رہی ہے ۔ کانگریس لیڈر سندیپ دکشت کا کہنا ہے کہ ان کے پاس اپنا کوئی لیڈر نہیں ہے، اسی لئے یہ دوسروں کی اہمیت کم کر رہے ہیں ۔

Loading...

ادھر بی جے پی نے جوابی حملہ کرتے ہوئے دلیل دی ہے کہ یونیورسٹی کی اس کتاب سے فڑنویس حکومت کا کوئی لینا دینا نہیں ہے ۔ ساتھ ہی کہا ہے کہ اب وقت آ گیا ہے جب ان لیڈروں کے بارے میں طالب علموں کو پڑھایا جائے، جن کو اتنے سالوں تک نظر انداز کیا جاتا رہا ہے ، جنہیں کبھی کانگریس کے دور اقتدار میں کتابوں میں جگہ نہیں دی گئی ۔

درییں اثنا اس تنازعہ کے سامنے آنے کے بعد ممبئی یونیورسٹی بھی حرکت میں آ گئی ہے ۔ ابتدائی تفتیش میں خود یونیورسٹی نے بھی اس کتاب کے کچھ حصوں کو متنازعہ سمجھتے ہوئے تحقیقات کے لئے ایک کمیٹی قائم کر دی ہے ۔ اس کے علاوہ یونیورسٹی نے دلیل دی ہے کہ گزشتہ تین سالوں سے اس کتاب کی پرنٹنگ ہو رہی ہے ۔ ممبئی یونیورسٹی کے رجسٹرار ایم اے خان نے کہا کہ ہماری کمیٹی جانچ کر رہی ہے ۔ اگر جانچ میں قصوروار پایا گیا تو کارروائی کی جائے گی۔

اس کتاب کی جانچ کر رہی کمیٹی دو ہفتوں میں اپنی رپورٹ وائس چانسلر کو سونپے گی ۔ بی جے پی حکومت بھلے ہی اس تنازع سے اپنا پلہ جھاڑنے کی کوشش کر رہی ہو، لیکن اپوزیشن اس معاملے کو اتنی آسانی سے چھوڑنا نہیں چاہتی ہے۔  کانگریس نے کہا ہے کہ وہ اس کتاب کی کاپیاں جلا کر اپنا احتجاج کرے گی ۔

Loading...